عالمی یوم خون عطیہ کرنے والوں کا دن – 2022

37

دنیا بھر میں ہر سال 14 جون کو خون کا عطیہ کرنے والوں کاعالمی دن منایا جاتا ہے تاکہ محفوظ، رضاکارانہ بلا معاوضہ یافتہ خون عطیہ کرنے والوں کی تعداد میں اضافے کو فروغ دیا جا سکے اور ان لو گوں کی حوصلہ افزائی کی جا سکے جو باقاعدگی سے خون عطیہ کرتے ہیں۔ یہ دن صحت کے حکام کی توجہ مبذول کرانے کا موقع بھی فراہم کرتا ہے تاکہ رضاکارانہ، بغیر معاوضہ کے خون کے عطیہ دہندگان سے خون کی وصولی میں اضافہ کرنے اور خون تک رسائی اور اس کی ضرورت رکھنے والوں کی منتقلی کا انتظام کرنے کے لئے مناسب وسائل فراہم کیے جا سکیں۔2022 کے لئے، عالمی یوم خون عطیہ کرنے کا موضوع ہوگا "خون عطیہ کرنا یکجہتی کا عمل ہے۔ کوشش میں شامل ہوں اور جانیں بچائیں”۔ اس سال خون کے عطیہ کی مہم کے مخصوص مقاصد دنیا میں خون عطیہ کرنے والوں کا شکریہ ادا کرنا اور باقاعدگی سے، بغیر معاوضہ خون کے عطیہ کی ضرورت کے بارے میں وسیع تر عوامی بیداری پیدا کرنا بھی ہے۔
خون کی سہولت جو مریضوں کو محفوظ خون اور خون کی مصنوعات تک مناسب مقدار میں رسائی فراہم کرے وہ ایک مؤثر صحت کے نظام کا ایک اہم جزو ہے۔ تھیلیسیمیا، ہیموفیلیا، کینسر اور یہاں تک کہ کورونا سے متاثرہ افراد کی زندہ رہنے کے لئے محفوظ خون کی منتقلی زیادہ اہم ہو جاتی ہے۔ محفوظ اور مناسب خون کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لئے رضاکارانہ غیر معاوضہ خون کے عطیات کی بنیاد پر قومی سطح پر مربوط خون کی منتقلی کی خدمت کی ترقی کی ضرورت ہے۔ مناسب اسکریننگ والا خون اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ ایچ آئی وی، ہیپاٹائٹس بی سی، سفلس اور ملیریا وغیرہ جیسی مہلک بیماریاں خون کی منتقلی سے منتقل نہ ہوں۔
خون عطیہ کرنا ایک آسان اور انتہائی محفوظ طریق کار ہے، اس کے باوجود آبادی کا صرف ایک چھوٹا ساحصہ باقاعدگی سے خون عطیہ کرتا ہے۔ خون کے عطیہ کے عمل میں 15 منٹ سے زیادہ وقت نہیں لگتا ۔ جسم میں آئرن کی کمی سے ہارٹ اٹیک کے امکانات 88 فیصد تک کم ہو جاتے ہیں۔ مستقل خون کے عطیہ سے کینسر کا خطرہ کم ہو جاتا ہے۔ خون کا عطیہ دینے والے کو مفت صحت کا تجزیہ اور بلڈ گروپ وغیرہ کا معلوم
ہو جاتا ہے۔ وزن کم کرنے کا یہ تیز ترین طریقہ ہے۔ سب سے بڑھ کر یہ کہ خون کا عطیہ انسانوں کی زندگیاں بچانے میں ایک ناقابل وضاحت روحانی سکون دیتا ہے۔ جہاں تک عطیہ کردہ خون کی بازیابی کا تعلق ہے، پلازما 24 گھنٹوں کے اندر تشکیل پاتا ہے؛ صحت مند سرخ خلیات 3-4 ہفتوں کے اندر بنائے جاتے ہیں جبکہ آئرن 4-6 ہفتوں کے اندر پیدا ہوتا ہے۔ مرد اور عورت بالترتیب تین اور چار ماہ کے اندر دوبارہ عطیہ دینے کے لئے تیار ہو جاتے ہیں۔
پاکستان میں خون کے عطیہ کرنے والوں کی مشکلات میں سے چنداہم مشکلات یعنی بغیر اسکرین شدہ خون، غیر تربیت یافتہ طبی عملہ، غیر معیاری خون کی منتقلی کے آلات، پیشہ ور عطیہ دہندگان سے خون جمع کرنے کے بارے میں عدم آگاہی، اور خون کے اجزاء کو استعمال کرنے کے بجائے پورے خون کا استعمال کرنا کچھ زیادہ اہم مسائل ہیں۔ رضاکارانہ عطیہ دہندگان کی تعداد بہت کم ہے جو کہ کچھ صرف بڑے شہروں میں ہیں۔ چھوٹے قصبے اور شہر جہاں ہماری آبادی کا بڑا حصہ رہتا ہے، ہمیشہ محفوظ خون سے محروم رہتے ہیں۔
پاکستان نے جرمن حکومت کی مدد سے 2010 میں سیف بلڈ ٹرانسفیوژن پروگرام (ایس بی ٹی پی) کا آغاز کیا تھا۔ اس پروگرام کے تحت بلڈ بینک مرکزی اور علاقائی سطح پر قائم کیے گئے ہیں تاکہ بلڈ ٹرانسفیوژن کا محفوظ اور مربوط نظام قائم کیا جاسکے۔ تاہم: دس سال کی کوششوں کے بعد اب تک مطلوبہ مقصد کا صرف 15 فیصد حاصل کیا گیا ہے۔ لہٰذا حکومت کو ان علاقائی خون مراکز کو مزید موثر بنانے کے لئے مناسب اقدامات کرنے کی ضرورت ہے۔
خون کے عطیہ دہندگان انسانیت کی ایک اہم خدمت فراہم کرتے ہیں۔ اللہ نے ہمیں سکھایا کہ ’’اگر کسی نے ایک انسان کی جان بچائی گویا  اس نے پوری انسانیت کی جان بچائی‘‘(قرآن 5:32)۔ پاکستان کو اوسطا ًہر سال 25 سے 30 لاکھ بلڈ یونٹس کی ضرورت ہوتی ہے۔  خون کے عطیہ دہندگان انسانیت کی ایک اہم خدمت فراہم کرتے ہیں۔ اگر صرف 1-3 فیصد آبادی رضاکارانہ اور باقاعدگی سے اپنا خون عطیہ کرنا شروع کر دے تو خون اور خون کی مصنوعات کی ضرورت آسانی سے پوری کی جا سکتی ہے۔ آگے آؤ، خون عطیہ کرو اور ہیرو بن جاؤ۔ عالمی یوم خون ڈونر ڈے کو عالمی کامیابی بنانے کے لئے دلچسپی رکھنے والے شراکت داروں کی شرکت کا ہر سطح پر خیر مقدم کیا جانا چاہیے۔

تبصرے بند ہیں.