وزیر اعلیٰ مریم نواز کے سو دن

48

پنجاب حکومت کے 100 دن مکمل ہو چکے ہیں، عام طور پر اتنا وقت کسی حکومت یا حکمران کی کارکردگی پرکھنے کے لیے کافی نہیں ہوتا، یہ عرصہ تو حکومتی معاملات کو سمجھنے اور سرکاری اداروں کی صورت حال جانچنے میں لگ جاتا ہے، پھر بھی یہ سوا تین مہینے کا وقت اتنا ضرور ہوتا ہے کہ حکومت یا حکمران کی سوچ کی سمت کا اندازہ لگایا جا سکے، یہ دیکھا جا سکے کہ وہ کیا کرنا چاہتے ہیں اور ان کی ترجیحات کیا ہیں۔ اس تناظر میں بطور وزیر اعلیٰ پنجاب مریم نواز کی کارکردگی کا جائزہ لیا جائے تو معلوم ہو گا کہ اس سارے عرصے میں وہ بے حد متحرک اور سرگرم رہی ہیں، ان 100 دنوں میں کوئی دن ایسا نہیں گیا جب انہوں نے کسی نہ کسی سرکاری ادارے کا دورہ نہ کیا ہو، وہاں کے حکام کی کارکردگی نہ جانچی ہو اور معاملات کو بہتر بنانے کے لیے احکامات نہ جاری کیے ہوں۔ ان کی سرگرمی کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جا سکتا ہے کہ اپنی حکومت کے پہلے سو دنوں میں انہوں نے 45 منصوبے شروع کرائے۔ مہنگائی، بے روزگاری، صحت، تعلیم، ٹرانسپورٹ، امنِ عامہ اور نوجوانوں کے مسائل کے حل پر خصوصی توجہ دی، ان کی ایک بڑی کامیابی مہنگائی کم کرنا ہے، انہوں نے اپنے اختیارات استعمال کرتے ہوئے 20 روپے والی روٹی 14 روپے کی کر دی اور نان کے نرخ بھی کم کیے، آٹے ،دالوں، چینی، گوشت، سبزیوں اور خوردنی تیل سمیت متعدد اشیا کی قیمتوں میں کمی واقع ہوئی، یہ مہنگائی کے مارے عوام کے لیے ایک بڑا ریلیف تھا۔

جس وقت مریم نواز نے پنجاب کی وزارت اعلیٰ کا حلف اٹھایا رمضان المبارک کی آمد آمد تھی، انہوں نے تیزی سے کام کرتے ہوئے اپنی حکومت کے پہلے رمضان پیکج کا اعلان کیا اور محکمہ خزانہ کو اس اعلان پر عمل درآمد کے لیے فوری طور پر 30 ارب روپے فراہم کرنے کا کہا۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق اس پیکج سے 65 لاکھ گھرانے اور ساڑھے تین کروڑ سے زائد افراد مستفید ہوئے، مسلم لیگ ن کی حکومت کا دعویٰ ہے کہ پنجاب میں صحت کے شعبے میں اصلاحات لائی گئی ہیں، فیلڈ ہسپتال قائم کیے گئے ہیں، امراض قلب کے مریضوں کو گھر گھر ادویات کی فراہمی کا سلسلہ شروع کیا گیا ہے، ڈائلیسز اور کینسر کے مریضوں کو مفت ادویات دینے کے کام کا آغاز کیا گیا ہے اور کسان کارڈ متعارف کرایا گیا ہے۔ یہ سارے دعوے درست ہو سکتے ہیں لیکن معاملہ اتنا بھی سیدھا اور سادہ نہیں جتنا بیان کر دیا جاتا ہے، یہ تصویر کا ایک رخ ہے جو خوش گوار ہو سکتا ہے لیکن اسی تصویر کا ایک دوسرا پہلو بھی ہے جسے اجاگر کیے بغیر نہ تو پوری تصویر واضح ہو گی اور نہ ہی اچھی طرح تجزیہ کیا جا سکے گا کہ مریم نواز کی حکومت کے پہلے سو دن کی کارکردگی دراصل ہے کیا اور کیسی؟

اس حقیقت سے انکار نہیں کیا جا سکتا کہ مریم نواز نے گزشتہ 100 دنوں میں درجنوں منصوبوں اور اقدامات کا اعلان کیا لیکن سوال یہ ہے کہ ان میں سے کتنے احکامات پر عمل درآمد ہوا اور کتنے اعلانات عمل درآمد کے بغیر ہی ہوا میں تحلیل ہو گئے۔ گزشتہ برس سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ حکومت کی رمضان المبارک میں 84 ارب روپے کی آٹا تقسیم میں 20 ارب سے زائد کی چوری ہوئی ہے۔ اس بار ایسی کرپشن کی کوئی خبر تو نہیں آئی لیکن یہ خبریں آتی رہیں کہ آٹا من پسند لوگوں کو فراہم کیا جا رہا ہے۔

9مارچ کی ایک خبر یہ ہے کہ وزیر اعلیٰ پنجاب کا نگہبان رمضان راشن سکیم ڈور ٹو ڈور راشن پہنچانے کا حکم نظر انداز کر دیا گیا، مستحقین کو ان کی دہلیز پر راشن کی عدم فراہمی، تھیلوں کی چوری، اور مستحقین کو محروم رکھنے جیسی شکایات سامنے آ رہی ہیں۔ پھر پنجاب میں آٹا اور روٹی تو سستے کر دیئے گئے لیکن کسی نے یہ نہیں سوچا کہ اس کی قیمت بلکہ بھاری قیمت ہمارے کسانوں کو ادا کرنا پڑ رہی ہے۔ انہی 100 دنوں میں تجاوزات ختم کرنے کا کہا گیا جو ختم نہیں ہو سکیں شہروں کی صفائی کا حکم جاری کیا گیا لیکن لاہور کے باہر ویسی صفائی نظر نہیں آئی جیسی نظر آنی چاہیے تھی۔ مریم نواز کی میڈیا کیمپین میں سوشل میڈیا کا اس قدر استعمال کیا گیا کہ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا امین گنڈا پور نے انہیں ٹک ٹاکر وزیر اعلیٰ کا نام دے دیا اور کہا کہ ان کی کارکردگی ٹک ٹاک کے لیے ہوتی ہے۔ مریم نواز کی حکومت میں محکموں کی کارکردگی، بے ہنگم آبادیوں اور ٹریفک کے مسائل میں کوئی کمی واقع نہیں ہوئی ہے۔ مریم نواز نے جو 43 منصوبے شروع کرائے ان میں سے کتنوں پر عمل ہوا، کسی کو کچھ معلوم نہیں۔ اور سب سے بڑھ کر یہ کہ پنجاب حکومت نے ہتک عزت کا بل بھی پہلے سو دنوں میں ہی پاس کیا اور اپوزیشن کی آواز کو نظر انداز کر کے کیا۔ اِس بِل کا اطلاق الیکٹرانک اور پرنٹ سمیت پورے سوشل میڈیا پر بھی ہو گا۔ یو ٹیوب، ٹک ٹاک، ایکس، فیس بک، انسٹا گرام اور سوشل میڈیا کے دوسرے پلیٹ فارمز سمیت کسی بھی میڈیا کے ذریعے جھوٹی اور غیر حقیقی خبریں پھیلانے پر ہتک عزت کا مقدمہ درج ہو سکے گا۔یہ سب جانتے ہیں کہ ہر حکومت کا اقتدار میں میڈیا معاملات پر موقف اور ہوتا ہے اور اپوزیشن کے دنوں میں مختلف۔

اب ان پہلے سو دنوں کی کارکردگی کی بنا پر آپ خود اندازہ لگا لیں کہ مریم نواز کی حکومت کتنی کامیاب اور کتنی ناکام ہے، حکمران کے لیے محض منصوبوں کا اعلان کرنا کافی نہیں ہوتا، ان پر عملدرآمد کرانے کے لیے نگرانی بھی کرنا پڑتی ہے، اگر آنے والے دنوں میں ان کوتاہیوں، خامیوں اور کمیوں کو دور کرنے کی کوشش کی جائے،تبھی حکمرانوں کی جانب سے کیا گیا گڈ گورننس کا کوئی دعویٰ سچ ثابت ہو گا۔

تبصرے بند ہیں.