عذر میرے قتل کرنے میں وہ اب لائیں گے کیا

81

ایک کسان کے پاس ایک بندر تھا اور وہ کسان کے مختلف کاموں میں  اس کا ہاتھ بھی بٹادیتا تھا۔کسان کو بندر کا بڑا آرام اور سکھ تھا۔ بندر کے ساتھ ساتھ کسان نے ایک گدھا بھی رکھا ہوا تھا اور کئی کام گدھے سے بھی لیتا تھا۔ بندر چونکہ فطری طور پر شرارتی جانور ہے۔بندر رات کو کچن میں جا کر آٹا کھا جاتا اور واپسی پر کچھ آٹا لا کر گدھے کے منہ پر مل دیتا اور خود آرام سے سو جاتا۔ صبح مالک اٹھتا آٹا کم پاکر کر گدھے کی چھترول کرتا جبکہ بندر دور بیٹھا دانتوں میں خلال کررہا ہوتا اور دل ہی دل میں اپنی چالاکی پر خوش ہوتا۔ یہی کچھ عوام کیساتھ ہورہا ہے۔ حکمران اور سرکاری ’’حکمران‘‘ ان عوام کے پیسوں پر عیاشی کرتے ہوئے دور بیٹھے دانتوں میں خلال کررہے ہیں۔ پٹرول سے اکٹھے ہونے والے اربوں روپے کے ٹیکس اپنے پروٹوکول اور سکیورٹی پر خرچ کرنے کے بعد بھی عوام کو یہ کہہ کر ذلیل کر رہے ہیں کہ یہ ٹیکس نہیں دیتے۔ وہی عوام اربوں روپے ان حکمرانوں کی سکیورٹی اور پروٹوکول پر خرچ کرنے کے بعد کسی حادثے کی صورت میں اپنے لیے کسی چیریٹی کی ایمبولینس ڈھونڈ رہے ہوتے ہیں۔اسی طرح ایک میراثی بیمار ہو گیا ڈاکٹر کے پاس گیا تو اس نے بہت زیادہ فیس مانگی بڑی منتیں کرنے پر بھی ڈاکٹر نے اسے رعایت نہ دی اور پورے پیسے لئے جب وہ جانبر ہو گیا تو اب وہ سارے گاؤں میں ڈاکٹر کے بارے میں لوگوں کو قصے سناتا پھرتا تھا ۔میں خواب وچ مر گیا تے فرشتے مینوں اسماناں تے لے گئے اوتھے جا کے میں اونہاں نوں کیہا کہ مینوں چھڈ دیو، مینوں پتہ اے کہ میں کدھر جانا اے اونہاں نے مینوں چھڈ دتا ساری زندگی نیکی دا کم کوئی نئیں سی کیتا، ایہو سوچ کے میں نیویں پاکے دوزخ ول ٹر پیا۔
دروازہ کھڑکایا تے دوزخ دے فرشتے نے کھڑکی وچوں سر باہر کڈھیافرشتہ: ’’کیہ گل اے‘‘؟مراثی: ’’میں نواں نواں مریا واں، تے اندر آنا ایں فرشتہ: ’’ناں کیہ تیرا”مراثی:پھجا مراثی”فرشتے نے دوزخیاں دی ساری لسٹ ویکھی، کدھرے وی میرا ناں نہ ملیا۔میں بڑا خوش، اْوتھوں مْڑ کے میں جنت ول ٹر پیا جنت دا دروازہ کھڑکایا تے اوتھوں دے فرشتے نے کھڑکی وچوں سر باہر کڈھیافرشتہ: "کیہ گل اے”؟مراثی: "میں نواں نواں مریا واں، دوزخ ول میرا ناں نئیں ملیا، تے مینوں اندر آون دیو”فرشتہ: "ناں کیہ تیرا”مراثی: "پھجا مراثی”فرشتے نے جنتیاں دی ساری لسٹ دیکھی، میرا ناں لبھدیاں اودھے پسینے چھٹ گئے پر کِدھرے وی میرا ناں نہ لبھیا۔ اونے دس کے فٹا فٹ کھڑکی بند کر دتی ہْن میں بڑا پریشان کہ کدھر جاواں۔ٹردا ٹردا جدوں اوس تھاں پہنچیا جتھے فرشتیاں مینوں چھڈیا سی تے مینوں چودھری جی دِسے۔چودھری جی: اوہ پھجیا، حرامدیا، ایدھر کیہ کردا پیا ایں؟مراثی: چودھری جی کیہ دساں۔ نواں نواں مریا واں تے میرا ناں دوزخ تے جنت وچ کدھرے وی نئیں ملدا پیاتے سمجھ نئیں آؤندی ہن میں کتھے جاواں!چودھری جی: اْوئے پھجیا توں کدھرے  ڈاکٹر بشیر کولوں تے علاج نئیں سی کرایا؟
اوہ ٹائم پورا ہوون توں 4 سال پہلاں ای بندے نوں مار دیندا اے مینوں آپ 2 سال ہو گئے باہر ای پھردے نوں۔اگر دوسال مزید حکومت کی یہی صورت حال رہی اور مہنگائی پر کنٹرول نہ ہوا،مافیاز پر ہاتھ نہ ڈالا گیا،چور بازاری ختم نہ ہوئی،قیمتیں کنٹرول نہ ہوئیں،لاقانونیت پر قابو نہ پایا گیا تو قوی امید ہے آدھی عوام وقت سے پہلے خودکشی کرلے گی اور باقی آدھی سر پر کفن باندھ کر مرنے کی تیاری کر رہی ہو گی۔بقول غالب
آج واں تیغ و کفن باندھے ہوئے جاتا ہوں میں
عذر میرے قتل کرنے میں وہ اب لائیں گے کیا

تبصرے بند ہیں.