توانائی کی قیمتیں 2022 کےاوائل تک کم ہو جائیں گی: آئی ایم ایف

53

نیویارک: آئی ایم ایف کی چیف اکانومسٹ گیتا گوپی ناتھ نے کہا ہے کہ توانائی کا موجودہ بحران 1970 کی دہائی کے تیل کے بحران کے برعکس ہے اور اُمید ہے اگلے سال تک قیمتیں معمول پر آجائیں گی ۔

گوپی ناتھ نے ایک انٹرویو میں کہا کہ توانائی کی قیمتیں گذشتہ سال کوویڈ 19 وبائی امراض پر قابو پانے کے لیے لگائے گئے شٹ ڈاؤن کے دوران گر گئی تھیں ، لیکن 2021 نے عالمی معیشت کی بحالی کے ساتھ ساتھ طلب میں تیزی سے اضافہ کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ توانائی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں سے گھروں کے اخراجات پر بوجھ پڑ رہا ہے لیکن اگلے سال تک صورتحال بہتر ہو جائے گی ۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ اور ورلڈ بینک کے سالانہ اجلاسوں کے موقع پر انہوں نے کہا کہ یہ بحالی واقعی بہت منفرد ہے ۔

آئی ایم ایف کی چیف اکانومسٹ نے کہا کہ کوویڈ 19 کے ڈیلٹا ویرینٹ کے پھیلاؤ کی وجہ سے بہت سے دیگر سامان کی سپلائی طلب کے طور پر تیزی سے بحال نہیں ہو سکی ، جس کی وجہ سے کارکن اپنی نوکریوں پر واپس آنے سے گریزاں ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ جرمنی ، امریکا اور جاپان جیسے ممالک میں مزدوروں کی قلت "قیمتوں کے دباؤ میں آ رہی ہے”۔

گوپی ناتھ نے مزید کہا ، "ہم ایک مشکل صورتحال میں ہیں جہاں ہم نے دیکھا ہے کہ قیمتیں بہت تیزی سے بڑھ رہی ہیں” لیکن اہم سوال یہ ہے کہ کیا یہ برقرار رہے گی ۔ انہوں نے کہا کہ اگلے دو مہینوں کے لیے توانائی کی قیمتیں "بلند” ہو جائیں گی ، لیکن ہم توقع کرتے ہیں کہ اگلے سال کی پہلی سہ ماہی کے اختتام تک اور دوسری سہ ماہی میں واپس آ جائیں گے ۔

چیف اکانومسٹ نے کہا کہ ایک بار جب ہم سردیوں کے مہینوں سے گزر جائیں گے ، ہم ایک بہتر جگہ پر ہوں گے ۔ انہوں نے کہا کہ توانائی کی قیمتوں میں اضافے نے اس خدشے کو بڑھا دیا ہے کہ مجموعی افراط زر اور بھی زیادہ ہو سکتا ہے اور عالمی معاشی بحالی میں رکاوٹ بن سکتا ہے ۔

آئی ایم ایف کی تازہ ترین پیشن گوئی کے مطابق 2022 کے وسط تک مہنگائی عالمی وبا سے پہلے کی پوزیشن میں آجائے گی لیکن ساتھ ہی امریکہ میں "اعلیٰ غیر یقینی صورتحال” کیلئے خطرے کی گھنٹی بھی بجا دی ۔

تبصرے بند ہیں.