سنگل ٹیئر ڈھانچہ اور اعلی ٹیکس، سگریٹ کی کھپت کو روکنے کی ترکیب

76

لاہور:پاکستان میں سگریٹ نوشی کی خطرناک شرح سے نمٹنے کے لیے ماہرین اور صحت کے حامیوں نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی اس سفارش کی حمایت کی ہے جس میں تمباکو کی مصنوعات پر ٹیکسوں میں نمایاں اضافے کے ساتھ ساتھ سنگل ٹیئر ٹیکس سٹرکچر میں تبدیلی شامل ہے۔

آئی ایم ایف کی فروری میں جاری ہونے والی ٹیکنیکل اسسٹنس رپورٹ "پاکستان ٹیکس پالیسی ڈائگناسٹک اینڈ ریفارم آپشنز” کے مطابق تمباکو مصنوعات کی قیمتوں میں خاطر خواہ اضافے کے بعد پاکستان میں سگریٹ کی کھپت میں 20 سے 25 فیصد کی نمایاں کمی دیکھی گئی ہے۔

زیادہ ٹیکسوں کی وجہ سے کھپت میں کمی کے نتائج نے ٹیکس کو عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کی طرف سے طے کردہ رہنما خطوط کے ساتھ ہم آہنگ کرنے کے مطالبے میں نئی جان پھونک دی ہے۔صحت کے کارکنوں نے بھی آئی ایم ایف کے موقف کی حمایت کی ہے اور پاکستان میں تمباکو ٹیکس کی پالیسیوں میں اصلاحات کی فوری ضرورت پر زور دیا ہے۔

انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ سنگل ٹیئر ٹوبیکو ٹیکسیشن سسٹم کو اپنائے اور مقامی اور درآمد شدہ سگریٹوں کے موجودہ دوہرے درجے کے نظام کو ختم کرے۔ تمباکو کی مصنوعات پر ٹیکس میں اضافے کے لئے آئی ایم ایف کی وکالت کا مقصد نہ صرف سگریٹ کی کھپت کو روکنا ہے بلکہ اس کا مقصد حکومت کی آمدنی میں بھی اضافہ کرنا ہے۔

یکساں ایکسائز ریٹس کے نفاذ اور مقامی اور غیر ملکی سگریٹ مینوفیکچررز کے درمیان فرق کو کم کرکے، پاکستان اپنے ٹیکس کے نظام کو ہموار کرنے اور تمباکو سے متعلق بیماریوں سے منسلک صحت کی دیکھ بھال کے اخراجات کو کم کرنے کے لئے کھڑا ہے.
دنیا بھر میں تمباکو نوشی کرنے والا ساتواں بڑا ملک پاکستان نے 2004 میں فریم ورک کنونشن فار ٹوبیکو کنٹرول (ایف سی ٹی سی) پر دستخط کیے تھے۔ عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) تمباکو کی قیمتوں میں اضافہ کرکے تمباکو کی کھپت کو کم کرنے کے لئے مضبوط ٹیکس اقدامات کی اہمیت پر زور دیتا ہے، خاص طور پر کم اور درمیانی آمدنی والے ممالک میں.
تاہم، سگریٹ کی صنعت نے سگریٹ کی سستی سے منسلک صحت کے نتائج کو نظر انداز کرتے ہوئے ٹیکس میں اضافے کی مسلسل مخالفت کی ہے۔
ٹیکسوں میں اضافے کے خلاف لابنگ کرنے والی ایم این سیز کے اثر و رسوخ کی وجہ سے پاکستان کو گزشتہ سات سالوں میں 567 ارب روپے کا نقصان اٹھانا پڑا ہے۔پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈیولپمنٹ اکنامکس (پی آئی ڈی ای) کی جانب سے کی گئی ایک تحقیق میں تمباکو نوشی سے متعلق بیماریوں اور اموات کے سنگین نتائج کی نشاندہی کی گئی ہے، جس کے اخراجات 2019 میں بڑھ کر 615.07 ارب روپے (3.85 ارب ڈالر) ہوگئے، جو جی ڈی پی کا 1.6 فیصد بنتا ہے۔

تبصرے بند ہیں.