ورکرزکی ٹوبیکو فیکٹری کو ڈی سیل کرنے کی اپیل

29

میرپور:والٹن ٹوبیکومینوفیکچرنگ  فیکٹری کو  ورکرز نے  ڈی سیل کرنے کی اپیل  کی ہے۔  کمپنی کے سینکڑوں ملازمین نے
چیف جسٹس آزاد کشمیر سے غیر قانونی فیکٹری بندش پر نوٹس لینے کی استدعا  کی ہے۔سینکڑوں ملازمین و ورکرز رہنما لیکسن ٹوبیکو کمپنی میرپور آزاد کشمیر نے چیف جسٹس آزاد کشمیر سے استدعا کی ہے کہ آزاد کشمیر حکومت نے بغیر کسی نوٹس   کے والٹن ٹوبیکو فیکٹری بند کی جس کے سبب  400 سے زائد ملازمین بے روزگار ہوگئے ہیں۔  والٹن سگریٹ ساز کمپنی کے ملازمین نےچیف جسٹس آزاد کشمیر سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے ساتھ ہونیوالی زیادتی کا ازالہ کیا جائے اور فوری انصاف مہیا کیا جائے۔

ترجمان والٹن ٹوبیکو کمپنی عارف ضیاء نے اس حوالے سے بتایا کہ انہیں آزاد کشمیر انتظامیہ کی جانب  سے سنگین نتائج کی دھمکیاں  مل رہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ انکی سگریٹ ساز کمپنی آزاد کشمیر میں سب سے زیادہ ٹیکس دینے والی کمپنی ہے جو ہر ماہ 240 ملین روپے ٹیکس کی مد میں قومی خزانے میں جمع کرواتے ہیں ۔

عارف ضیاء نے میڈیا کو آگاہ کیا کہ انکی کمپنی پر غیر قانونی ریڈ کیا گیا اور کمپنی کو سیل کر کے تمام پراڈکٹس قبضے میں لے لی گئیں۔ والٹن ٹوبیکو کمپنی کے ترجمان عارف ضیا اور دیگر ورکرز رہنما محمد علی ،عمر احمد نے کہا  آزاد کشمیر حکومت  کا رویہ سگریٹ ساز کمپنی کیساتھ استحصال پر مبنی ہے اور سالانہ اربوں روپے ٹیکس ادا کرنے والی ہماری فیکٹری پر انتہائی متعصبانہ انداز میں چھاپہ مارا گیا اور سیل کیا  گیا   مفروضوں کی بنیاد پر ہمارے مالکان کو چور ثابت کیا گیا جو ظلم ہے۔  انہوں نے کہا کہ ان عوامل کے سبب آزاد کشمیر میں بے روزگاری کی شرح میں اضافہ ہو رہا ہے ۔

والٹن ٹوبیکو کمپنی کے ملازمین و رہنماؤں نے میرپور چترپڑی میں فیکڑی کے باہر راولپنڈی روڈ پر ملازمین کے ایک بڑے  اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  والٹن ٹوبیکو کمپنی ریاست کی سب سے بڑی ٹیکس گزار کمپنی  ہے  حکومت فی الفور فیکٹری کو کھولنے کے احکامات جاری کرے ،بصورت دیگر ملازمین احتجاج کا دائرہ کار وسیع کرنے پر مجبور ہونگے اور راولپنڈی ،کوٹلی ڈیفنس روڈ پر دھرنا دینگے کیونکہ ہم اب مزید بچوں کی خوشیوں کا اور اپنا معاشی قتل برداشت نہیں کر سکتے۔

ترجمان والٹن ٹوبیکو کمپنی عارف ضیاء نے کہا کہ آزاد کشمیر حکومت پہلے بازاروں سے  غیرقانونی طور پر فروخت ھونے والے سگریٹس پر کریک ڈاؤن کرے۔ ٹوبیکو کمپنی مالکان  ٹیکسز ادا کرکے کاروبار کر رہیےہی اور سینکڑوں گھرانوں کے چولہے والٹن ٹوبیکو کمپنی کی بدولت چل رہے ہیں عید کے موقع پر فیکڑی کی بندش سے ہم عید کی خوشیوں سے محروم رہے جو ہمارے اور ہمارے خاندانوں کا معاشی استحصال کے مترادف ہے۔

تبصرے بند ہیں.