قرضوں اور ٹیکسوں کی بھرمار

23

عام خیال یہ ہے کہ بانی پی ٹی آئی کو روس کی طرف جھکاؤپر وزیرِ اعظم کے منصب سے ہٹایا گیا اور امریکی ایما پر عدمِ اعتماد کے ذریعے شہباز شریف کو اقتدارمیں لانے کی راہ ہموار کی گئی مگر حالات سے ایسے خیال یاسوچ کی نفی ہو رہی ہے کیونکہ بانی پی ٹی آئی کی حمایت میں امریکہ پیش پیش ہے تو شہباز شریف کا جھکاؤ بھی واضح طورپر روس کی طرف ہے قازقستان کے دارالحکومت آستانہ میں صدرپوٹن سے ہونے والی خوشگوار ملاقات کے دوران باہمی تعاون بڑھانے پر اتفاق اور پاکستان کے دورے کی دعوت دینے سے واضح ہے کہ چین کے دوست ممالک سے پاکستان تعاون بڑھانے کی روش پر گامزن ہے دوطرفہ معاہدوں کے لیے بیلاروس کے صدر کا اکتوبر میں متوقع دورہ بھی ایسی پیش رفت ہے جس سے امریکی مداخلت کے خیال کی تائید نہیں ہوتی بلکہ پی ٹی آئی کارکنوں کے بنائے تاثرکوبے بنیاد کہا جا سکتاہے عین ممکن ہے وہ بھی شش وپنج کاشکارہوں مگر ایک بات ہے کہ تیسری دنیا کے اکثر ممالک کے حکمرانوں کی طرح پاکستانی حکمران بھی حقائق کے بجائے تصورات اور ذات سے نہیں نکل رہے اقتدار کے ساتھ ہی پالیسیاں بدل جاتی ہیں اگر پالیسیوں میں تسلسل رہے تو شایدکچھ بہتری آجائے اور کسی کو بے بنیاد بیانیہ بنانے کا موقع نہ ملے مزیدیہ کہ ترقی یافتہ ممالک علم و تحقیق پر بھاری رقوم صرف کرتے ہیں نیز عوامی مزاج کو ملکی مفادسے ہم آہنگ رکھنے کے لیے باقاعدہ اِدارے ہوتے ہیں جن کامطمع نظر حکومتوں کی تشکیل یا ذاتی مفاد نہیں ہوتا بلکہ وہ مملکت کے وسیع تر مفاد کو مقدم رکھتے ہوئے رائے عامہ کی ذہن سازی کرتے ہیں بدقسمتی سے پاکستان میں اِس حوالے سے کام نہ ہونے کے برابر ہے علم و تحقیق کے اخراجات میں بھی کمی کی جا رہی ہے یہاں اکثر قلمکار بھی حقیقت بیانی کے بجائے عوامی مزاج دیکھ کر لکھتے ہیں ایسا علمی اور تحقیقی حوالے سے ترقی یافتہ ممالک میں نہیں ہوتا اب وقت آ گیا ہے کہ پاکستان میں اقتدار کی تبدیلی کا مطلب پالیسیوں میں تبدیلی نہ لیا جائے بلکہ جو بھی اقتدار میں آئے ملکی مفاد مقدم رکھے اور کوشش کرے کہ پالیسیوں کا تسلسل قائم رہے علاوہ ازیں علم وتحقیق کے فروغ پر کام کرنے کے ساتھ رائے عامہ کی زہن سازی پر بھی توجہ دی جائے۔

ہمارے حکمران معاہدے کرنے میں جتنی جلد بازی کا مظاہرہ کرتے ہیں اُس کا نصف بھی منصوبوں کی تکمیل میں نہیں کیاجاتا اکثر منصوبے معینہ مدت میں مکمل نہیں ہوپاتے یہ تاخیر وقت کے زیاں کے ساتھ لاگت بڑھنے کا موجب بنتی ہے مثال کے طور ایران سے قدرتی گیس درآمد کرنے کا معاہدہ کیا گیا ایران کئی برس قبل اپنے حصے کا کام مکمل کر چکا لیکن امریکی پابندیوں سے خوفزدہ پاکستان ہنوز اپنے حصے کا کام مکمل نہیں کر سکا اِس لیے توانائی کا بحران بدستور موجود ہے اب تو مذکورہ منصوبے کی لاگت میں بھی اربوں کا اضافہ ہو گیا ہے اگر حکومتیں معاہدے کرنے اور منصوبوں کے آغاز سے قبل تھوڑا غوروفکر کر لیا کریں تو ایسی نوبت نہ آئے کیا کوئی جھٹلا سکتا ہے کہ پاک ایران روابط میں قدرتی گیس درآمد کرنے کے منصوبے کی بروقت تکمیل نہ ہونے پر سفارتی سطح پر خفگی موجود ہے؟ سوال یہ ہے کہ جب امریکی پابندیوں کے باوجود ایران سے بھارت تجارت بڑھانے کے ساتھ بھاری سرمایہ کاری میں مصروف ہے تو پاکستان کو بھی اپنے مفاد کے تحفظ کا حق حاصل ہے مگر اکثر پاکستانی حکومتیں اپنے سیاسی مفادات کے لیے عالمی طاقتوں کے سامنے موقف پیش کرنے میں تساہل سے کام لیتی اور محض ملنے والی ہدایات پر عمل کرنے پر اکتفاکرتی ہیں جس سے نہ صرف پالیسیوں کے تسلسل میں رخنہ اور غربت میں اضافہ ہورہاہے بلکہ عوام میں بھی انتشارجنم لے رہا ہے اگر رہنمائی کے لیے اِدارے موجودہوں تو نہ صرف حکومتوں کا محاسبہ ہونا آسان ہو جائے گابلکہ عوامی مفاد کی نگہبانی کا مقصد بھی حاصل کیاجا سکتا ہے۔

دنیا کے قرض کا حجم 91کھرب ڈالر سے تجاوز کر چکا جوکُل عالمی معیشت کے مساوی ہے مگر حقیقت یہ ہے کہ اِس کا عشر عشیر بھی معیشت کی بحالی اورعوامی بھلائی کے منصوبوں پر خرچ ہوسکا بلکہ رقوم کا بڑا حصہ یا تو بدعنوانی کی نذر ہو گیا یا پھر حکومتیں مستحکم بنانے کی مد میں استعمال کرلیا گیا لیکن قرض کے بڑھتے رجحان سے معاشی بہتری کے بجائے کئی ممالک کی معیشت کھوکھلی ہوگئی ہے اب جبکہ یہ خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے اور آثار وقرائن سے بھی واضح ہے کہ آئندہ چند سال میں عالمی قرضوں کا حجم 120کھرب ڈالر سے تجاوز کر سکتا ہے جسے کنٹرول کرنا کمزور حکومتوں کے لیے دردِ سراور بڑا چیلنج ہو سکتا ہے بدقسمتی سے پاکستان کا شمار بھی ایسے اولیں ممالک میں ہوتا ہے پہلے امریکی اور اب چینی بلاک کا حصہ بننے کا نتیجہ ہے کہ قرض کُل معیشت کے مساوی ہوگیا ہے اب تو نوبت یہاں تک جا پہنچی ہے کہ اقساط اور سود کی ادائیگی کے لیے مزید قرض لینامجبوری ہے لیکن حکومتی شاہ خرچیاں دیکھیں تو کوئی کمی نہیں آرہی جس کی وجہ سے عوام کے معیارِ زندگی کولاحق خطرات میں وقت کے ساتھ اضافہ دیکھا جانے لگاہے کیونکہ ٹیکس بڑھا کر وسائل اکٹھے کرنا آسان سمجھ لیا گیا ہے جس سے سخت عوامی ردِ عمل کا امکان بڑھتا جارہا ہے لیکن اگر حکومتی صفوں کی طرف دیکھیں تو کسی قسم کی پریشانی کے آثار نہیں بلکہ ایک اطمینان کی کیفیت ہے ظاہر ہے ایسا حقائق سے عدم آگاہی کی بدولت ہی ممکن ہے حکومت کی توجہ معیشت اور عوام کا معیارِ زندگی بہتر بنانے کے بجائے حزبِ مخالف کو قابوکرنے پر ہے ملکی مفاد،عوامی حقوق کے تحفظ اور بدعنوانی کا خاتمہ کرنے کے بجائے جب اپوزیشن کوناکام بنانے پرہی سارا زور لگایا جائے گا تو مسائل میں کمی نہیں آسکتی اگر حکومتیں انتقامی کارروائیوں کے بجائے آئینی فرائض تک محدود رہیں اور اپوزیشن مثبت کردار کرے نیز پالیسیوں کا تسلسل قائم رہے تومسائل حل ہو سکتے ہیں پاکستان کئی دہائیوں سے عدمِ استحکام کا شکار ہے مگراپوزیشن اور حکومت رویہ بدلنے پر آمادہ نہیں ہر نئی حکومت نہ صرف سابقہ حکمرانوں کے جاری منصوبوں پر کام روک دیتی ہے بلکہ خارجی تعلقات کی نوعیت بھی بدل دیتی ہے جس سے پاکستان کا عالمی تشخص ایک جذباتی ریاست کا سا ہو کر رہ گیا ہے کمزور حکومتیں اپنے بچاؤ کے لیے عالمی طاقتوں کی آلہ کار بننے پر مجبور ہوتی ہیں ایسا طرزِ عمل کسی بھی آزاد و خودمختار اور فلاحی ریاست کے شایانِ شان نہیں ضرورت اِس امر کی ہے کہ قرضوں سے ملک چلانے کی سوچ پر نظر ثانی کی جائے اور اقتدارکی تبدیلی سے منصوبوں کی تکمیل میں رکاوٹیں نہ آنے دی جائیں علاوہ ازیں خودانحصاری کی پالیسی اپنائی جائے لیکن یہ تبھی ممکن ہے جب تصورات سے نکل کر حقائق کا ادراک کیا جائے اور ملکی و عوامی مفاد کو سیاست سے مقدم رکھا جائے۔

تبصرے بند ہیں.