ملک بھر میں سیلاب سے ہلاکتوں کی تعداد 1,290 ہو گئی

8

اسلام آباد: ملک بھر میں سیلاب کے باعث مختلف حادثات میں مزید 26 افراد جاں بحق ہو گئے جس کے بعد مجموعی ہلاکتوں کی تعداد 1 ہزار 290 تک پہنچ گئی ہے۔ 
تفصیلات کے مطابق نیشنل فلڈ رسپانس اینڈ کو آرڈی نیشن (این ایف آر سی سی) کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران سیلاب کے باعث مختلف حادثات میں 26 افراد جاں بحق ہوئے جس کے بعد 14 جون سے اب تک ہلاکتوں کی تعداد ایک ہزار 290 ہو چکی ہے۔ 
رپورٹ کے مطابق سیلاب اور مختلف حادثات میں جاں بحق ہونے والوں میں 570 مرد، 259 خواتین اور 453 بچے شامل ہیں جبکہ زخمیوں کی تعداد 12 ہزار سے زائد ہے۔ قومی شاہراہ مدین این 95 بحرین اور لائیکوٹ کے درمیان بلاک ہے، سندھ میں قومی شاہراہ این 55 میہر جوہی نہر سے خیرپور ناتھن شاہ تک ڈوبی ہونے کے باعث بند ہے۔
سیلاب اور بارشوں کے باعث ملک کے مختلف حصوں میں ریلوے نیٹ ورک بھی بری طرح متاثر ہوا ہے جس کے باعث بلوچستان میں کوئٹہ تفتان اور کوئٹہ سبی اور سبی سے حبیب کوٹ تک ریلوے ٹریک تاحال بند ہے، اسی طرح پنجاب اور سندھ کے درمیان حیدرآباد سے روہڑی اور ملتان تک ریلوے ٹریفک بھی متاثر ہے۔
رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں نقصانات کے سروے کیلئے 29 ٹیمیں کوئٹہ، پشین،لورالائی، دکی، سوراب، جعفر آباد، صحبت پور، آواران، لسبیلہ، گوادر، قلعہ سیف اللہ، واشک، کوہلو، موسی خیل، زیارت، قلعہ عبداللہ، خضدار، نصیر آباد، کچھی، سبی، ڈیرہ بگٹی، شیرانی، ژوب، خاران، قلات، مستونگ اور چمن میں مصروف عمل ہیں۔ 
یاد رہے کہ وزیراعظم شہباز شریف نے گزشتہ روز نیشنل فلڈ ریسپانس اینڈ کوآرڈی نیشن سینٹر (این ایف آر سی سی) قائم کرنے کا اعلان کیا تھا جس کے چیئرمین وہ خود ہیں جبکہ وزیر منصوبہ بندی احسن اقبال ڈپٹی چیئرمین ہوں گے۔ 
اس ضمن میں جاری کئے گئے اعلامیہ میں کہا گیا تھا کہ کمانڈر آرمی ایئر ڈیفنس کمانڈ این ایف آر سی سی کے نیشنل کوآرڈینٹر ہوں گے، اقتصادی امور، خارجہ، داخلہ، خزانہ موسمیاتی تبدیلی کی وزارتوں کے وزراءارکان بھی ٹیم کا حصہ ہوں گے۔

تبصرے بند ہیں.