کون کہتا ہے پنجاب میں آئینی بحران ہے؟ عثمان بزدار آج بھی وزیراعلیٰ ہیں: سپیکر پنجاب اسمبلی

51

لاہور: سپیکر پنجاب اسمبلی چوہدری پرویز الٰہی نے کہا ہے کہ کون کہتا ہے پنجاب میں آئینی بحران ہے؟ سردار عثمان بزدار آج بھی وزیراعلیٰ ہیں اور ان کے حقوق بحال ہیں لیکن غیر آئینی اور غیر منتخب وزیراعلیٰ چاہتا ہے کہ اقتدار اسے دیدیا جائے۔ 
تفصیلات کے مطابق پریس کانفرنس کرتے ہوئے چوہدری پرویز الٰہی کا کہنا تھا کہ شہباز شریف کے کہنے پر پولیس نے اسمبلی میں حملہ کیا اور سارا مسئلہ پولیس کے گیلری میں آنے کے باعث پیدا ہوا۔ پوری قوم نے شریفوں کا چہرہ دیکھ لیا ہے۔ پولیس کو استعمال کیا جا رہا ہے اور آئی جی و چیف سیکرٹری شریفوں کے آلہ کار بن چکے ہیں۔ 
انہوں نے کہا کہ پنجاب اسمبلی کے افسروں کو پولیس کے ذریعے ہراساں کیا جا رہا ہے، کچھ افسران گرفتار کر لئے گئے ہیں جبکہ بہت سے مزید افسران کو گرفتار کرنے کیلئے چھاپے مارے جا رہے ہیں۔ 
سپیکر پنجاب اسمبلی کا کہنا تھا کہ 16 اپریل کے اجلاس کے دوران پولیس نے ایوان میں گھس کر اراکین اسمبلی پر تشدد کیا جس کے باعث ہماری ایک رکن آئی سی یو میں وینٹی لیٹر پر زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہی ہے۔ 
انہوں نے کہا کہ ساڑھے تین سالوں میں ایسے حالات پیدا نہیں ہوئے جو شریفوں نے اقتدار ملنے کے چند دنوں میں پیدا کر دئیے، ناگفتہ بہ حالات کی وجہ سے آج کا اجلاس منعقد کرنا ممکن نہیں تھا، موجودہ حالات کی وجہ سے اجلاس کو 16 مئی تک کے لئے ملتوی کیا ہے۔ 
ان کا کہنا تھا کہ کون کہتا ہے صوبے میں آئینی بحران ہے؟ عثمان بزدار آج بھی وزیراعلیٰ ہیں اور ان کے حقوق بحال ہیں لیکن غیر آئینی اورغیر منتخب وزیراعلیٰ چاہتا ہے کہ اقتدار اسے دیدیا جائے۔ 

تبصرے بند ہیں.