قومی اسمبلی اجلاس 22 اپریل تک ملتوی کرنے کیخلاف حکم امتناع کی درخواست مسترد

281

اسلام آباد: اسلام آباد ہائیکورٹ نے قومی اسمبلی کا اجلاس 22 اپریل تک ملتوی کرنے کیخلاف فوری حکم امتناع کی درخواست مسترد کر دی ہے۔ چیف جسٹس نے ریمارکس دئیے کہ پارلیمینٹ کے وقار کا خیال رکھتے ہوئے ہم اس میں مداخلت نہیں کرتے۔ 
تفصیلات کے مطابق چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ جسٹس اطہرمن اللہ کی سربراہی میں لارجربینچ نے ڈپٹی سپیکرکی جانب سے قومی اسمبلی کا اجلاس 22 اپریل تک ملتوی کرنے کے خلاف فوری حکم امتناع کی درخواست کی سماعت کی۔ 
پاکستان مسلم لیگ (ن) کے مرتضیٰ جاوید عباسی کی جانب سے دائردرخواست میں قومی اسمبلی کا اجلاس 22 اپریل کے بجائے پہلے سے شیڈول 16 اپریل کو بلا کر سپیکر الیکشن کی ووٹنگ کرانے کی استدعا کی گئی تھی۔
دوران سماعت جسٹس عامرفاروق نے استفسار کیا کہ 16 اپریل کو قومی اسمبلی کے اجلاس کا ایجنڈا کیا تھا جس پر درخواست گزار کے وکیل منصوراعوان نے بتایا کہ اس روز ایجنڈے میں سپیکرکا انتخاب ہونا شامل ہے۔ قومی اسمبلی بغیر سپیکر کے چل رہی ہے، سپیکر کا دفترخالی نہیں رکھا جا سکتا۔
چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے ریمارکس دئیے کہ یہ توپارلیمان کی اندرونی کارروائی ہے تاریخ بھی مقررہوچکی ہے، سپیکر قومی اسمبلی کا انتخاب 22 اپریل کو ہو جائے گا، پارلیمینٹ کے وقار کا خیال رکھتے ہوئے ہم اس میں مداخلت نہیں کرتے۔ 
چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے مزید کہا کہ پارلیمینٹ کی بہت بے توقیری ہوگئی ہے کسی پرشک کرنے کی وجہ بھی نہیں ہے، آپ نے پارلیمان کی کاروائی میں مداخلت نا کرنے کے معاملے پر بھی مطمئن کرنا ہے۔
عدالت نے ڈپٹی سپیکر قاسم سوری،سیکرٹری قومی اسمبلی سیکرٹری پارلیمنٹری افیئرز کو 22 اپریل کیلئے نوٹس جاری کرتے ہوئے ڈپٹی سپیکر و دیگر کو 22 اپریل تک جواب جمع کرانے کی ہدایت کردی۔

تبصرے بند ہیں.