بجلی کی مہنگی پیداوار، چیئرمین نیپرا تقسیم کار کمپنیوں پر برہم

45

اسلام آباد: نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیرٹی اتھارٹی (نیپرا) کے چیئرمین نے مہنگی بجلی کی پیداوار پر سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی (سی پی پی اے) اور نیشنل پاور کنسٹرکشن کارپوریشن (این پی سی سی) پر برہمی کا اظہار کیا ہے۔ 
میڈیا رپورٹس کے مطابق چیئرمین نیپرا توصیف فاروقی نے سی پی پی اے اور این پی سی سی کی جانب سے بجلی کی قیمت میں فی یونٹ 4 روپے 33 پیسے اضافے کی درخواست پر سماعت کی۔ بجلی کی قیمت میں اضافے کی یہ درخواست نومبر کی فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کی مد میں کی گئی ہے اور یہ درخواست کے الیکٹرک کے سوا تمام تقسیم کارکمپنیوں کیلئے ہے۔
درخواست گزاروں نے چیئرمین نیپرا کو بتایا کہ مہنگے فیول کی وجہ سے بجلی کی پیداواری لاگت میں اضافہ ہوا۔ اجلاس کو یہ بھی بتایا گیا کہ سی پی پی اے کی درخواست کے مطابق نومبر کیلئے بجلی کی قیمت میں اضافے کا بوجھ 35 ارب 70 کروڑ روپے بنے گا جس پر چیئرمین نیپرا نے برہمی کا اظہار کیا۔ 
چیئرمین نیپرا نے کہا کہ آپ صرف بجلی پیدا کرتے ہیں، یہ نہیں دیکھتے کہ یہ مہنگا پلانٹ ہے، ہم 3 سال کا آڈٹ کراتے ہیں کہ کس پلانٹ نے کتنی بجلی پیدا کی جبکہ اس موقع پر انہوں نے مہنگی بجلی کی پیداوار پر ناراضی کا اظہار بھی کیا۔ 

تبصرے بند ہیں.