مہنگائی اور احتجاج

111

مہنگائی نے عام آدمی کی چیخیں نکال دی ہیں اچھے بھلے صنعتکار اور آفیسر بھی پٹرول،بجلی،آٹا،گھی کی بڑھتی قیمتوں سے پریشان ہیں اگربالاتر طبقات کے یہ حالات ہیں تو تصور کریں عام آدمی کِن مشکلات کے گرداب میں پھنسا ہو گا لیکن مستقبل میں بہتری کا امکان ہے؟افسوس کہ اِس سوال کا جواب ہاں میں نہیں دیا جا سکتا وجہ یہ ہے کہ مستقبل میں بہتری کا امکان تبھی ہوسکتاہے جب مہنگائی میں کمی لانے کے لیے ٹھوس فیصلے اور نتیجہ خیز اقدامات اُٹھائے جائیں یہاں تو حالات ایسے ہیں کہ وزراء میں حریفوں کے خلاف تندوتیز بیانات کے سواکوئی خوبی نہیں اور سبھی عملی طور پر کچھ کرنے کی بجائے شیخ چلی کی طرح ہوامیں قلعے تعمیر کرنے اور جاگتی آنکھوں سے خواب دیکھتے میں یکتا ہیں جہاں ایسا طرزعمل اور ایسی غیر سنجیدگی ہووہاں مہنگائی کم ہونے کے امکانات کی بات حقائق کے منافی ہوگی۔
کسی وزیر باتدبیر سے پٹرول کی گرانی کی وجوہات دریافت کریں تو جواب میں عالمی منڈی میں قیمتوں میں اضافہ کا ذکر کرتے ہوئے ہمسایہ ممالک میں تیل کی قیمتیں پاکستانی کرنسی میں بتا کر مہنگائی کم ثابت کرنے کی کوشش کریں گے لیکن یہ نہیں بتائیں گے کہ وہاں کی کرنسی کا ہم سے کتنا فرق اورعام آدمی کی پاکستانی کرنسی میں تنخواہ کیا ہے؟ ارے بھئی اگر عوام کو حالات کے رحم وکرم پر ہی چھوڑنا ہے تو لمبی چوڑی وزیروں کی فوج رکھنے کی کیا ضرورت؟ سب کو گھر بھیجیں تنخواہوں،گھروں اور گاڑیوں کی سہولتوں پر اُٹھنے والے اخراجات سے تو ملک بچ جائے گا کیونکہ کوئی بھی وزیر اپنی ذمہ داریاں ادا نہیں کر رہا اگر کررہاہوتا تو حالات آج اتنے خراب نہ ہوتے کرونا کی وجہ سے عالمی منڈی میں تیل کی قیمتیں یکدم گر نے کے ایام میں دوست ممالک سے تیل کی درآمد کے معاہدے کیے جاتے ایسا ہوتا تو آج نہ صرف زرِ مبادلہ کے زخائربہتر ہوتے بلکہ حکومت پر سیاسی دباؤ نہ ہوتا علاوہ ازیں پورے ملک میں کم نرخوں پر پٹرول دستیاب ہوتالیکن بروقت فیصلے نہ کرنے سے آج ملک مہنگائی کے عذاب سے دوچار اور سیاسی عدمِ استحکام کا خطرہ بھی یقینی ہے۔
سستی توانائی صنعت و زراعت کے فروغ کے لیے لازم ہے مگرآئی ایم ایف کی ہدایات پر ہونے والی مہنگی بجلی کی بابت حکومتی نمائندوں سے سوال کیا جائے تومہنگی بجلی کے معاہدوں کا ذمہ دار سابق حکمرانوں کو ٹھہرادیا جاتا ہے اور اگر کوئی غلطی سے کہہ دے کہ سرکاراقتدار میں آئے آپ کو تین برس سے زائد عرصہ ہو گیاہے پھر بجلی کے معاہدے درست کیوں نہیں کر سکے؟ تو سوال سن کرناگواری ظاہر کرتے ہوئے کہیں گے جنھوں نے باری باری پینتیس برس ملک پر حکومت کی اُن سے توآپ پوچھنے کی جسارت نہیں کرتے ہمیں اقتدار میں آئے ابھی تین بر س ہی ہوئے ہیں اور ہم سے حساب کتاب ہونے لگا ہے ملک کا کباڑہ کرنے اور عوام کو بھوکوں مارنے کی اجازت کوئی نہیں دے
سکتاحکمران چاہتے ہیں چاہے ملک میں جتنی بھی مہنگائی ہو جائے یا پٹرول کے نرخ خواہ کچھ ہو جائیں عوام صبروشکر کریں ایسا نہیں ہو سکتا۔
آٹا،چینی،گھی اور خوردنی تیل عام آدمی کی قوتِ خرید سے باہر ہو چکا ہے مگرمافیا کو ذمہ دار کہہ کر اطمینان دلانے کی کوشش کرنا ظاہر کرتا ہے کہ اربابِ اختیار کوکوئی فکر نہیں مہنگائی کے ذمہ دار مافیا کے سامنے ڈٹ کر کھڑا ہونے کی داستان سنانے والے یہ نہیں بتاتے کہ کپتان مافیا کے سامنے ڈٹ کر کھڑا کیوں ہے؟مافیا کے گریبانوں پر ہاتھ کیوں نہیں ڈالتا کیا عام آدمی کی جان لینے کا منصوبہ ہے؟حالات جس نہج پر پہنچ چکے ہیں اگر جلد بہتری نہ لائی گئی تو حکمرانوں کو مشکل دنوں کے لیے تیار رہنا ہوگا جس طرح کپتا ن سب کو گھبرانا نہیں ہے کا درس دیتے ہیں عین ممکن ہے زوردار تحریک کی صورت میں عوام سے پہلے حکومت کی گھبرانے کی باری آجائے معروف عالمی جریدے دی اکانومسٹ نے مہنگائی کے حوالے سے اعداد و شمار جاری کرتے ہوئے پاکستان کو دنیا کا چوتھا مہنگا ترین ملک قرار دیا ہے ارجنٹائن پہلے،ترکی دوسرے اور برازیل تیسرے نمبر پر ہے ہر بات پر بھارت کی مثال پیش کرنے والوں کے لیے یہ رپورٹ کسی تازیانے سے کم نہیں کہ بتائے گئے اعداد وشمارکے مطابق وہ بھی مہنگائی کے حوالے سے پاکستان سے بہتر ہے اُس کارپورٹ میں نمبر 16ہے لیکن عمران خان کاخیال ہے کہ تاریخی کہانیوں پر مبنی ڈرامے اور کہانیاں بنانا ہی مہنگائی کا حل ہے۔
حکمرانوں نے دورانِ اقتدار آج تک مہنگائی کم کرنے کے لیے کبھی نتیجہ خیز اقدامات اُٹھائے ہیں؟ ہنوز ایسا کوئی اشارہ نہیں ملتاالبتہ اتنا ضرور کہا جانے لگا ہے کہ مہنگائی کے اثرات کا احساس ہے اور ٹارگٹڈ سبسڈی پروگرام کے اجرا کی باتیں کی جانے لگی ہیں کم آمدنی والوں کو پٹرول،ڈیزل اور یوٹیلٹی سٹورز میں اشیائے خورونوش پر رعایت دینے کے وعدے اور ضلعوں میں مہنگائی روک کمیٹیاں بنانے کا عندیہ دیا جانے لگاہے ساتھ ہی دالوں،سبزیوں،چینی اور آٹے کی قیمتیں کم کرنے کا مژدہ سنایا جا رہا ہے کیا باتوں سے کسی کا پیٹ بھرا جا سکتا ہے؟ مگر حکمران عوام کو روکھی سوکھی کھانے کی سکت سے محروم کرنے کے بعدچکنی چپڑی باتوں سے عوام کا پیٹ بھرنے کے لیے کوشاں ہیں عمران خان اپنی ناکامیوں کو مذہبی خیالات کے اظہارسے ڈھانپنے اور اسلام پسند تشخص بنا کر مذہبی ووٹ کی ہمدردیاں سمیٹنے کے چکر میں ہیں لیکن اُنھیں یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ بھوک پیٹ بھرنے سے کم ہوتی ہے مذہبی باتوں کے پرچارسے نہیں۔
مہنگائی نے ملک میں احتجاج کی فضا بنا دی ہے ہراپوزیشن جماعت کی اولیں کوشش ہے کہ عوای مشکلات پر بات کر کے خود کوذیادہ سے ذیادہ عوامی جماعت ثابت کیا جائے پی ڈی ایم اور پیپلز پارٹی راہیں جدا ہونے کے باوجود احتجاج میں پیش پیش ہیں سب سے بنا کر رکھنے والے شہباز شریف بھی مصلحتیں چھوڑکر میدانِ عمل میں آگئے ہیں مگر حکمران مہنگائی کم کرنے کی بجائے عوامی رابطہ مُہم شروع کرنے اور بلدیاتی انتخابات کا شیڈول جاری کرنے کی ہدایات دے کر اپوزیشن تحریک کے توڑ کا خواب دیکھ رہے ہیں یہ فیصلے اور ایسا طرزِ عمل فہم و دانش کے منافی ہے مہنگائی کے خلاف احتجاج کازور مہنگائی میں کمی سے ہی توڑا جا سکتا ہے لیکن احتجاجی لہر کو تقویت دینے والے فیصلوں کی بھرمار ہے تحریکِ لبیک کے سربراہ سعد رضوی کی ضمانت پر رہائی کے عدالتی احکامات کے باوجود حکمران راہ فرار پر گامزن ہیں جو احتجای لہرکو مزید جاندار بنانے کے مترادف ہے ابھی تو ریلیوں اور مظاہروں کا سلسلہ شروع ہے سیاسی کارکنوں کے ساتھ وکلا اورٹرانسپورٹرہی سڑکوں پر آئے ہیں دیگر طبقات کے شامل ہونے سے احتجاجی سلسلہ جلسوں اورپھر بڑے مارچ تک بھی پہنچ سکتا ہے مہنگائی کے خلاف احتجاجی تحریک سے ہویدا ہے کہ ریلیوں اور مظاہروں میں بڑھتی عوامی شرکت کو حکومت محض باتوں سے کم نہیں کر سکتی نہ ہی باتوں سے مہنگائی کم ثابت کر نے کے حربے کامیاب ہو سکتے ہیں اگر عوامی حمایت اور سیاسی استحکام کو برقرار رکھنا ہے تو عام آدمی کو اشیائے خوردونوش کی ارزاں نرخوں پر فراہمی کو یقینی بنانا ہو گا۔

تبصرے بند ہیں.