تحریک عدم اعتماد پیش ہونے کے بعد جام کمال نے اہم اعلان کر دیا

96

کوئٹہ :وزیر اعلیٰ جام کمال نے اسمبلی کے فلو پرتحریک عدم اعتماد پیش کرنے والوں کو دو ٹوک جواب دیتے ہوئے کہا کہ استعفیٰ نہیں دونگا ،اس ایوان سے مجھے دو ووٹ بھی ملے تو بھی میرے لیے فخر کی بات ہو گی ،ہر صورت تحریک عدم اعتماد کا مقابلہ کرونگا ۔

وزیر اعلیٰ بلوچستان نے اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ کرسی کیلئے نہیں بیٹھا اور نہ ہی کرسی کیلئے لڑا ہوں ،لیکن اگر سیاسی صورتحال خراب ہوئی تو سب کا نقصان ہو گا ،جولوگ یہ سمجھتے ہیں کہ استعفیٰ دونگا تو یہ ان کی سوچ ہے میں تحریک عدم اعتماد  کا مقابلہ کرونگا ،جام کمال نے کہا اس ایوان سے مجھے دو ووٹ بھی ملے تو بھی میرے لیے فخر کی بات ہوگی،آج بھی اپنی جماعت سمیت اتحادیوں کا ساتھ ہے ۔

جام کمال نے کہا بلوچستان کے ہر ضلع میں ترقیاتی کام ہورہے ہیں،اگر ہم جیت گئے پھر ثناہ بلوچ کو استعفیٰ  دینا چائیے ،انہوں نے کہا اقتدار کی بھوک ان کو ہوتی ہے جو اقتدار میں نہیں ہو تا ،ہماری کارکردگی پر تنقید کرنے والوں کو معلوم ہونا چاہیے کہ ہمارے دور حکومت میں ہی ایجوکیشن کے حوالے سے بلوچستان میں بہت کام ہو رہا ہے،اگر میں ہار گیا میں اس پلور کو چھوڑ دونگا ۔

دوسری طرف اسپیکر بلوچستا ن اسمبلی قدوس بزنجو نے کہا ہر ایک کو حق ہے اپنی رائے دیں ، جو اراکین نہیں آئے وہ میڈیا کے سامنے آجائیں اور اپنا فیصلہ کریں ۔ پہلی بار ایسا ہوا ممبر اس طرح سے غیر حاضر ہیں، سپیکر نے کہا جام کمال کو مخاطب کرتے ہوئے کہا جام صاحب آپ چیر کو جواب دیں .

جام کمال نے سپیکر کو جواب دیتے ہوئے کہا کہ بغیر تحقیقات کے کوئی بات نہیں کرنی چاہیے ،اگر اراکین کے لاپتہ ہونے کا مسئلہ ہے تو پولیس سے رابطہ کرنا چاہیے ۔

تبصرے بند ہیں.