وزیر اعظم میری موت کی خبر کا انتظار کر رہے ہیں : ڈاکٹرعبدالقدیر کا آخری خط

670

 

اسلام آباد : انتقال سے قبل محسن پاکستان ایٹمی سائنسدان ڈاکٹر عبد القدیر خان کا وزیراعلی سندھ کو لکھا گیا  خط سامنے آگیا ہے۔

 

نیو نیوز کے مطابق 4 اکتوبر کو لکھا گیا خط محسن پاکستان ڈاکٹرعبدالقدیر خان کا اپنی زندگی کا آخری خط  تھا جو انہوں نے وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کو لکھا۔

 

خط میں ڈاکٹرعبد القدیرخان نےوزیر اعلی سندھ مراد علی شاہ کا یاد کرنے، طبیعت پوچھنے اور گلدستہ بھیجنے پر شکریہ ادا کیا۔ ڈاکٹرعبدالقدیر خان نے اپنے خط میں وزیر اعلیٰ سندھ  سے وزیرِاعظم عمران خان، وزیراعلیٰ عثمان بزدار، وزیراعلیٰ محمود خان اور وزیراعلیٰ جام کمال  کے رویے پر افسوس کا اظہار کیا۔

 

ڈاکٹرعبدالقدیر نےکہاکہ دیگر صوبوں کےوزرائےاعلیٰ کومیری یاد تک نہ آئی۔وزیراعظم سمیت دیگر صوبوں کے وزرا شاید میری موت کی خبر کا انتظار کر رہے ہیں ۔

ڈاکٹر عبد القدیر خان کا 4 اکتوبر کو  لکھا گیا خط وزیراعلی ہاؤس میں ڈاک کے ذریعے 6 اکتوبر کو وصول ہوا۔

 

دوسری طرف  ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی فہیم کو ٹائپنگ کے لئے لکھی گئی تحریر سامنے آگئی  ہے۔جس میں انہوں نے کہا کہ  میں نے یا میرے محب وطن ساتھیوں کوئی غلط کام نہیں کیا۔ مجھے جو کہا گیا اس پر عمل کیا کوئی غلط کام نہیں کیا ۔

ڈاکٹر عبدالقدیر نے کہا کہ اللہ گواہ ہے جہاں چاہتا چلا جاتا تو کھرب پتی بن سکتا تھا ۔میں 1971کو سانحہ پاکستان بھلا نہیں پایا تھا ۔مجھے نہایت افسوس ہے کہ مجھے انصاف نہیں ملا۔  میری طبیعت ٹھیک نہیں رہتی اگر میں فوت ہوجاؤں تو شہر شہر گاؤں گاؤں غائبانہ نماز جنازہ پڑھائی  جائے۔

تبصرے بند ہیں.