کراچی میں کورونا وائرس کی لہر کچھ کم ہونا شروع ہو گئی ہے: وزیراعلیٰ سندھ

161

کراچی: وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کہا ہے کہ عالمگیر موذی وباءکورونا وائرس کی چوتھی لہر کچھ کم ہونا شروع گئی ہے اور شہر قائد میں کورونا کے 21 فیصد کیسز ہیں جن میں 3 فیصد کمی آئی ہے۔ 
میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیراعلیٰ ہاﺅس کراچی میں وزیراعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی زیر صدارت نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر (این سی او سی) کا مشترکہ اجلاس ہوا جس میں وفاقی وزیر اسدعمر، لیفٹیننٹ جنرل حمود الزمان، سی پیک سپیشل اسسٹنٹ خالد منصور، میجر جنرل محمود، ڈاکٹر فیصل، ڈاکٹر سارا خان، پروفیسر سعید قریشی اور وزیراعلیٰ سندھ کے ساتھ صوبائی وزراءڈاکٹر عذرا پیچوہو، سید ناصر شاہ، سید سردار شاہ، مرتضیٰ وہاب، سیکرٹری صحت ڈاکٹرکاظم جتوئی، قاسم سومرو، چیف سیکریٹری ممتاز شاہ، آئی جی سندھ مشتاق مہر، اور وزیراعلیٰ سندھ کے پرنسپل سیکرٹری ساجد جمال ابڑو نے شرکت کی۔
اجلاس کے شرکاءکو ملک بھر میں کورونا وائرس کی موجودہ صورتحال پر بریفنگ دی گئی اور بتایا گیا کہ آزاد جموں و کشمیر میں کورونا کیسز عروج پر ہیں جن کی شرح 26 فیصد ہے جبکہ سندھ میں 13 فیصد، خیبر پختونخواہ اور پنجاب میں کیسز سست رفتاری سے بڑھ رہے ہیں۔
وزیراعلیٰ سندھ نے اجلاس کو بتایا کہ ہم کورونا کی چوتھی لہر کے چھٹے ہفتے میں داخل ہوچکے ہیں اور اب چوتھی لہر کچھ کم ہونا شروع ہوئی ہے، کراچی میں 21 فیصد کیسز ہیں جن میں 3 فیصد کمی آئی ہے، کراچی میں67 فیصد کیسز لاہور، اسلام آباد، پشاور، راولپنڈی اور حیدر آباد سے آ رہے ہیں، ملک میں انڈین ڈیلٹا ویرینٹ کی لہر جاری ہے جو کراچی میں زیادہ ہے، کراچی میں 1210 مریض تشویشناک حالت میں ہیں جو ملک میں سب سے زیادہ تعداد ہے، کراچی میں اموات کی شرح میں بھی اضافہ ہوا ہے۔
وزیراعلیٰ سندھ کا کہنا تھا کہ سندھ حکومت نے 31 جولائی سے 8 اگست تک کورونا پر قابو پانے کیلئے سخت اقدامات کئے، اس وقت سندھ میں مجموعی طورپر 1120 آکسیجن بیڈز ہیں جس میں این ڈی ایم اے نے 537 آکسیجن بیڈز سندھ حکومت کو مہیا کئے ہیں، اور خود سندھ حکومت نے اپنے ذرائع سے مزید 583 آکسیجن بیڈز ہسپتالوں میں لگائے ہیں، آکسیجن بیڈز میں 100 بیڈ جے پی ایم سی، 75 عباسی شہید، 100 عید گاہ میٹرنٹی، 150 ایکسپو اور 158 کوویڈ ہسپتالوں میں ہیں۔

تبصرے بند ہیں.