آزاد کشمیر میں تحریک انصاف کے کارکنان کا قتل، پی پی رہنما کا بیٹا گرفتار

151

کوٹلی: آزاد کشمیر انتخابات میں تحریک انصاف کے دو کارکنان کے قتل کیس میں پیپلزپارٹی کے رہنما چوہدری یاسین کے بیٹے کو گرفتار کرلیا گیا ، مقتول کے ورثا کی ایف آئی آرمیں چوہدری یاسین اور بیٹے نامزد ہیں۔

 

انتخابات کےدوران کوٹلی کےعلاقہ چڑھوئی میں دو پی ٹی آئی کارکنان کے قتل کیس میں پولیس نے پیپلزپارٹی کے رہنما چوہدری یاسین کے بیٹے شاہنواز یاسین کو گرفتار کر لیا۔ مقتول کے ورثا کی ایف آئی آرمیں چوہدری یاسین اور بیٹے نامزد ہیں جبکہ وزیر اعظم عمران خان نے بھی پی ٹی آئی کارکنان کے قتل کا نوٹس لے رکھا ہے۔

 

خیال رہے آزادکشمیرالیکشن میں پولنگ کے دوران فائرنگ سے جاں بحق پی ٹی آئی کارکنان کے قتل کا مقدمہ پی پی رہنماچوہدری یاسین کیخلاف درج کیا گیا تھا، درج مقدمے میں چوہدری یاسین ، 2بیٹوں سمیت 4 افراد کو نامزد کیا گیا تھا۔

 

چوہدری یاسین حالیہ انتخابات میں دو حلقوں سے کامیاب ہوئے ہیں ان کا تعلق پاکستان پیپلز پارٹی سے ہے، انتخابات کے دوران چڑھوئی میں فائرنگ سے دو افراد جاں بحق اور کئی زخمی ہوئے تھے۔

 

ادھر چئیرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو نے آزاد کشمیرمیں چوہدری یاسین کو سیاسی انتقام کا نشانے کی مذمت کرتے ہوئے کہا قاتلانہ حملہ چوہدری یاسین پر ہوا اورمقدمہ بھی ، پولیس نے حملہ آوروں کےبجائےالٹا چوہدری یاسین پرایف آئی آر درج کرلی، سیاسی انتقام بند نہ ہواتوآزاد کشمیر میں خوداحتجاج کی سربراہی کروں گا۔

 

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ 2 افراد کے قتل کے واقعےمیں براہ راست پی پی امیدوار کو مجرم ٹھہرایا گیا اور یہ کیسی ریاست ہے عمران خان کیخلاف تقریر پرتو نیب نوٹس بھیج دیتا ہے اور سیٹ جیت لو تو قتل کا مجرم بن ادیا جاتا ہے، انصاف کا تقاضہ تو یہ تھا کہ دو افراد کے قتل پرجوڈیشل انکوائری ہوتی۔

 

تبصرے بند ہیں.