پیغام اور ذمہ داری

105

بدھ کے روزجوہر ٹاؤن لاہور میں ہونے والے بم دھماکے نے ملک کو ہلا کر رکھا دیا ہے اِس دھماکے سے ملک دشمنوں نے پیغام دیا ہے کہ وہ کمزور ضرور ہوئے ہیں مگر ابھی اُن کا کُلی طورپر خاتمہ نہیں ہوا نیز ملک کا کوئی حصہ بھی اُن کے ناپاک عزائم سے محفوظ نہیں وہ ملک کے ہر حصے میں کارروائی پر قادرہیں کے پی کے اور بلوچستان میں تو عرصہ سے غیر ملکی سرگرم ہیں جنہیں ناکام بنانے کے لیے سکیورٹی اِدارے کارروائیاں کرتے رہتے ہیں لیکن اب لگتا ہے کہ فرائض کے حوالے سے چوکس نہیں قدرے آرام پسند ہو گئے ہیں لاہور دھماکے سے ثابت ہو گیا ہے کہ دہشت گرد ہروقت ملک کے تمام علاقوں میں جانی و مالی نقصان کی پوزیشن میں ہیں جس کے لیے لازم ہے کہ سکیورٹی اِدارے دیگر مصروفیات ترک کریں اور فرائض پرتوجہ دیں ملک دشمن عناصر کی سرکوبی پر مامور اِداروں کے لیے مزید غفلت کی گنجائش نہیں کیونکہ معمولی سی نرمی،سُستی یا غفلت کسی بڑے حادثے کاپیش خیمہ بن سکتی ہے۔
حافظ سعید عرصہ ہواعملی طورپرغیر متحرک ہیں بلکہ نظر بندی میں ایام گزاررہے ہیں مگر جب وہ متحرک تھے تو کشمیر یوں کے لیے کافی کام کیا اسی بنا پر بھارت کی ناپسندید ہ ترین شخصیات میں شمار ہوتے ہیں لاہور دھماکہ اُن کے گھر کے اتنا قریب ہوا ہے کہ تین شہدا کے ساتھ شدید زخمیوں میں سکیورٹی پر مامور کانسٹیبل بھی شامل ہے اِس لیے حافظ سعید کو نقصان پہنچانے کی کوشش کا امکان رَد نہیں کیا جا سکتا اِس لیے دھماکے میں بین الا قوامی خفیہ ایجنسیوں کا ہاتھ ہو سکتا ہے چاہے تاحال کسی تنظیم نے ذمہ داری قبول نہیں کی لیکن سوال یہ ہے کہ ایک نظر بند شخص جو آزادانہ نقل و حمل سے محروم ہے اُس سے کسی کو کیا خطرہ ہو سکتا ہے لامحالہ قوی خیال ہے کہ جس ملک کے وہ نا پسندید ہ ہیں وہ انہیں خوفزدہ کرنے کے لیے طاقت کا مظاہرہ کرسکتا ہے اِس پہلوکو دھیان میں رکھ کر ایجنسیوں کو تفتیش کا دائرہ کار وسیع کر نا چاہیے۔
لاہور بم دھماکہ ایسے حالات میں ہوا ہے جب بھارت کو کشمیر میں سخت مزاحمت کا سامنا ہے اور مودی کی پوری کوشش ہے کہ دنیا کو یقین دلایا جائے کہ کشمیری تبدیل شدہ حالات کو قبول کر چکے ہیں لیکن اِس حوالے سے ہونے والا ہر ڈرامہ فلاپ ہورہا ہے کٹھ پتلی قیادت بھی کشمیر کی سابقہ حیثیت بحال کرنے کا مطالبہ کرنے لگی ہے جمعرات کو نئی دہلی میں ہونے والے ساڑھے تین گھنٹے کے اجلاس میں ایسے سیاسی رہنما بھی حکومت پر برستے رہے جن کی سیاست کا دارومدار ہی بھارتی قیادت کی چاکری پر ہے کانگرس اور ممتا بینر جی جیسے اپوزیشن رہنماؤں کی طرف سے بھی شدید تنقید ہو رہی ہے عمر عبداللہ جیسا نسلی کشمیری غدا ر سپریم کورٹ جانے کا اعلان کرنے لگا ہے حالانکہ مودی نے تمام کشمیری قیادت کو دعوت دینے کے بجائے صرف بھارت نواز رہنماؤں کو ہی بلایا تھا پھر بھی کسی سیاسی رہنما نے بھارتی حکومت 
کے یکطرفہ فیصلے کی تائید نہیں کی جس کے جواب میں جنونی مودی کہنا پڑا کہ پہلے ریاستی اسمبلی کے انتخاب ہو جانے دیں بعد میں مناسب وقت پر ریاستی حیثیت بحال کر دوں گا پاکستان کی طرف سے بھی کشمیر کے حوالے سے اپنائے موقف میں کوئی لچک نہیں آئی بلکہ سفارتی تعلقات محدود کرنے کے بعد مسلسل کشمیریوں کو حقِ خود اِرادیت دینے کا مطالبہ کیاجا رہا ہے اِس دباؤ کو کم کرنے کے لیے بھارت کا دہشت گردانہ کارروائیوں کی سرپرستی بعید ازامکان نہیں۔
نیٹو انخلا کے بعد کابل حکومت ختم ہونے کے آثار نظر آنے لگے ہیں طالبان کابل کے نواحی علاقوں تک پہنچ چکے ہیں اور معافی کا اعلان ہونے کے بعد سرکاری فوج کے ہتھیارڈالنے کا عمل تیز ہو چکا ہے صدر جو بائیڈن سے مشاورت کے لیے اشرف غنی اور عبداللہ عبداللہ دو نوں امریکہ پہنچ چکے ہیں اسی دوران امریکہ نے اعلان کیا ہے کہ طالبان کا بزور طاقت کنٹرول تسلیم نہیں کر یں گے پاکستان نے مطالبے کے باوجود امریکہ کو اڈے نہیں دیے جس کی بنا پر دونوں ملکوں میں سفارتی سطح پر قدرے تناؤ ہے علاوہ ازیں پیشِ نظر رکھنے والی بات یہ ہے کہ امریکہ وبھارت آج کل ایک دوسرے پر ریشہ ختمی ہیں اور عالمی معاملات پر دونوں میں مکمل یگانگت پائی جاتی ہے کشمیریوں کے دباؤ کو کم کرنے اور اڈے نہ دینے پر غصے کے اظہار کے لیے دونوں ممالک کی مشترکہ کارروائی کا امکان خارج ازامکان نہیں علاقائی تنازعات اور چیلنجز کو ذہن میں رکھتے ہوئے اِدارے تحقیقات کا دائرہ وسیع کریں تو اصل ذمہ داران تک پہنچا جا سکتا ہے بلوچستان اور کے پی کے کی مقامی آبادی میں غیر ملکی حاشیہ برداروں کے خلاف فضا ہموار ہونے لگی ہے اگر ہماری ایجنسیاں ٹھوس لائحہ عمل بناکر کام کریں تو ایسے واقعات کا تدارک آسان ہو سکتا ہے لیکن ضرورت اِس امر کی ہے کہ فرائض کی طرف دھیان رکھیں اور غیر متعلقہ مصروفیات میں الجھ کر وقت ضائع نہ کیا جائے۔
پاکستان میں سیاسی استحکام نہیں ہاتھ نچاتے اور گلے پھاڑکر چیختے چلاتے حکومتی و اپوزیشن رہنماؤں کا طرزِ عمل کسی طور ذمہ دار نہیں کہہ سکتے بلکہ سیاسی قوتوں میں ڈیڈ لاک کی سی کیفیت ہے ایسے حالات غیر ملکی قوتوں کو کھل کرکھیلنے کی دعوت دیتے ہیں پہلے ہی لڑ جھگڑ کا آدھا ملک گنوا چکے مزید ایسے کسی صدمے کے متحمل نہیں ہو سکتے اگر حکومت اور اپوزیشن مل بیٹھ کر ذمہ داریوں کا تعین کرلیں اور انتقامی رویے اور تنقید برائے تنقید کا سلسلہ ترک کر دیا جائے تو دشمن قوتوں کی حوصلہ شکنی ہو گی اور ملک میں سیاسی استحکام آ سکتا ہے لیکن اِس کے لیے سب کو انا کے خول سے نکلنا ہو گا لاہور دھماکے کا پیغام بڑا واضح ہے کہ دشمن سے کوئی علاقہ محفوظ نہیں بلکہ وہ ہر جگہ وار کر سکتا ہے تو ملک کی سیاسی قیادت متفقہ لائحہ عمل کے لیے ایک کیوں نہیں ہو سکتی؟
لاہور بم دھماکے کے ماسٹر مائنڈ پیٹر پال ڈیوڈ سمیت تمام سہولت کاروں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ کرتے ہوئے تفتیشی ٹیموں نے را کی طرف سے فنڈنگ کا نکشاف کیا ہے بابو صابو ناکے پر تعینات سکیورٹی اہلکار کی طرف بارود سے بھری گاڑی کو گزرنے کی اجازت دینے کی پاداش میں شاملِ تفتیش کیا جا چکا ہے لیکن تحقیقات میں کوئی بھی پہلو تشنہ نہیں رہنا چاہیے اور ظاہری کے ساتھ پوشیدہ ذمہ داران کے خلاف بھی کارروائی ہو نی چاہیے بھارت اور امریکہ گٹھ جوڑ میں کسی کو ابہام نہیں لیکن ہمارے سکیورٹی اِداروں کو بھی دفاعی کارروائیوں کے علاوہ بھی اپنی استعداد کا مظاہرہ کرنا چاہیے بھارتی جاسوس کلبھوش سمیت کئی غیر ملکی حاشیہ بردار جو دہشت گردانہ کارروائیوں کی سہولت کاری میں پیش پیش ہیں اُن کی سرکوبی میں کسی قسم کی نرمی یا رحم دلی کا مظاہرہ کرنے کی ضرورت نہیں نتیجہ خیز کارروائی حالات کا تقاضا ہے جس سے پہلو تہی عوامی اعتماد میں کمی کا باعث بن سکتی ہے اور سیاسی قیادت اور اِدارے عوامی اعتماد کو برقرار رکھنے کے لیے مصلحت پسندی کا دامن جھٹک دیں اگر دشمن قوتیں ہر علاقے میں کارروائی کرنے کی طاقت رکھنے کا پیغام دے سکتی ہیں تو ہمیں بھی سرکوبی کرنے کی قوت رکھنے کا پیغام پہنچا نے کی ذمہ داری پوری کرنی چاہیے۔

تبصرے بند ہیں.