Untitled-1 copy

فن کے قاضی نے دنیا چھو ڑ دی

کراچی :  سینئر ریڈیو اور ٹی وی اداکار قاضی واجد انتقال کر گئے ۔ ان کی عمر 87 برس تھی ۔ قاضی واجد کی طبیعت رات کو بگڑی تھی جس پر انہیں ہسپتال لیجایا گیا لیکن وہ جانبر نہ ہو سکے اور خالق حقیقی سے جا ملے۔ قاضی واجد کے بھائی کے مطابق قاضی واجد کو بخار ہوا تھا اس سے قبل دو دن پہلے انہوں نے ڈرامے کی ریکارڈ نگ میں حصہ بھی لیا تھا۔ اتوار کی صبح انہیں دل کا دورہ پڑا تھا جو جان لیوا ثابت ہو۔ قاضی واجد شوگر اور بلڈ پریشر کے بھی مریض تھے ۔ وہ 26 مئی 1930 کو لاہور میں پیدا ہوئے زندگی کی آخری سانس تک فن سے منسلک رہے اور ان کی مقبولیت میں کبھی بھی کمی نہیں آئی وہ پاکستان ہی نہیں بلکہ دنیا بھر میں اپنی مخصوص اداکاری کی وجہ سے پہچان رکھتے تھے ۔ انہیں 1988 میں پرائیڈ آف پرفارمنس کے ایوارڈ سے نوازا گیا تھا۔ نے درجنوں فلموں اور ڈڑاموں میں کام کیا۔ انہوں نے بچوں کے کارٹونوں میں بھی اپنی آواز دی۔ انہیں اپنے کام پر بھر پور کنٹرول حاصل تھا اور وہ ہر ہر کرادار میں فٹ ہو جاتے تھے ۔ ۔ ان کی وفات پر شو بز کے حلقوں نے ان کا بچھڑنا ناقابل تلافی نقصان قرار دیاکہ قاضی واجد فن کی یونیورسٹی تھے جس سے ہزاروں فنکار مستفید ہو ئے قاضی واجد نے انہوں نے فنی زندگی کا اغاز ریڈیو پاکستان سے کیا اور25 سال ریڈیو کےلئے کام کیا ان کا شمار ریڈیو کے بانیوں میں ہوتا تھاوہ اپنی آواز کے اتار چڑھاو کی بدولت عوام میں خصوصی پزیرائی رکھتے تھے ۔ تنہایاں، آنگن ٹیڑھا، دھوپ کنارے ، خدا کی بستی، حوا کی بیٹی،باادب با ملاخظہ ہوشیار، پل دو پل، ننگے پاوں ، تعلیم بالغاں، ہوائیں سمیت متعدد ڈرامے شامل ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *