maxresdefault

آصف زرداری کا حکومت کے خلاف سڑکوں پر نکلنے کا اعلان ، شہباز شریف سے استعفے کا مطالبہ

لاہور : پیپلزپارٹی پر کے شریک چئیرمین آصف زرداری نے سانحہ ماڈل پر مسلم لیگ ن کی حکومت کے خلاف سڑکوں پر نکلنے کا اعلان کر دیا انہوں نے عوامی تحریک کے سربراہ ڈاکٹر طاہر القادری کے ہمرا پریس کانفرنس میں کہا ہم مطالبہ کرتے ہیں کہ شہباز شریف نجفی کمیشن رپورٹس کے بعد اپنے عہدے سے مستعفی ہوں۔ سانحہ ماڈل ٹاون سے آنکھیں بند نہیں کر سکتے ۔ اب کہنا چاہتے ہیں بہت ہو گیا شہباز شریف استعفی دیں۔ سانحہ ماڈل ٹاون بربریت کی بدترین مثال ہے 14 افراد کو شہید کیا گیا اور سو افراد کو زخمی و معذور کر دیا گیا – ہم قومی اسمبلی و سینٹ میں شہباز شریف کے استعفے کی بات کریں۔ طاہر القادری نے کنٹینر پر بیٹھنے کا حکم دیا تو ہم ساتھ ہونگے ۔ انہوں نے شہبا ز شریف کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا 36 وزارتیں ایک شخص کے پاس ہونا کوئی جمہوریت نہیں ہم شہباز شریف کو برداشت نہیں کر سکتے جمہوریت وہ نہیں جو نواز شر یف اور شہباز شریف چلا رہے ہیں۔ انہوں نے کہا سن لو شہباز شریف ہم سڑکوں پر نکلیں گے ہم اداروں سے نہیں ہم شریفوں سے لڑیں گے ۔نوازشریف اور شہباز شریف کو عدالتوں کا سامنا کرنا ہوگا۔ ہم آئین کو توڑنے کی بات نہیں کر رہے ہم صرف حکومت کے خلاف لڑنے کا اعلان کر رہے ہیں۔ سانحہ ماڈل ٹاون کے ذمہ داروں کو سزا ملنی چاہئے ۔ آصف زرداری نے کہا ملک میں تبدیلی کا ذریعہ ووٹ ہی ہے ۔ موجودہ مسائل صرف سیاسی قوتیں ہی حل کر سکتی ہیں۔ طاہر القادری کے ساتھ مل کر سیاست کرنے میں کوئی حرج نہیں ۔ طاہر القادری نے ہر دور میں جمہوریت کےلئے ہمارا ساتھ دیا علامہ صاحب سے ہماری پرانی وابستگی ہے ۔ اس موقع پر ڈاکٹر طاہر القادری نے کہا باقر نجفی رپورٹ شہباز شریف کو قاتل قرار دیتی ہے ۔ مشتاق سکھیرا کی تعیناتی وفاق کی جانب سے ہوئی جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ نواز شریف بھی سازش میں شریک تھے مشتاق سکھیرا کو آئی جی لگانا پنجاب میں خون کی ہولی کھیلنا تھا ۔رانا ثنا اللہ براہ راست آپریشن کو ہنڈل کرتے رہے سانحہ ماڈل ٹاون میں اعلی حکمران شامل تھے ۔ انہوں نے کہا پولیس کو خفیہ اور واضح احکامات دئیے گئے تھے ۔ جو کہتے ہیں کہ رپورٹ مکمل نہیں وہ جھوٹ بولتے ہیں۔ رپورٹ مکمل ہے ۔ رپورٹ نے تمام مجرموں کو بے نقاب کر دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کمیشن نے واضح کہا کہ بئیر ہائیکورٹ کے حکم پر لگے ۔ حکومتی پلان بیرئیر ہٹانے کے لئے نہیں بلکہ لاشیں گرانے کےلئے تھا ۔پولیس حکام یہ بتانے کو تیار نہیںکہ گولی کس کس نے چلائی۔رانا ثنا اللہ کو قتل عام کی ذمہ داری سونپی گئی تھی ۔ وہ اس آپریشن کے انچار ج تھے ۔ رانا ثنا اللہ استعفی دے کر خود کو قانون کے حوالے کریں۔رپورٹ نے یہ بھی بتادیا کہ جس نے بھی بیان حلفی دیا ہے وہ جھوٹ ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *