Untitled-1 copy

لکھ لیں سزا دی نہیں دلوائی جارہی ہے۔نواز شریف

اسلام ا آباد ٟمانیٹرنگ ڈیسکٞ سابق وزیر اعظم نواز شریف نے کہا ہے اب بھی میری باتیں لکھ لیں جو کہہ رہاہوں وہ سچ ثابت ہو گا۔۔ 1999ئ میں بھی کہا تھا کہ طیارہ ہائی جیک کے جھوٹے کیس میں سزا دلوائی جارہی ہے، اس وقت بھی مجھے پھنسایا گیا اور آج بھی وہی معاملہ دہرایا جارہا ہے انہوں نے احتساب عدالت میں پیشی کے موقع پر میڈیا سے غیر رسمی گفتگو میں کہا سپریم کورٹ نے پاناما کیس کے فیصلے میں ایسے ریمارکس دیے جیسے ہمارے سیاسی مخالفین دیتے ہیں، وہ سپریم کورٹ کا فیصلہ نہیں بلکہ نیب کو واضح پیغام تھا کہ نوازشریف کو ہر قیمت پر سزا دینی ہے۔ احتساب کو کہیں اور سے کنٹرول کیا جارہا ہے اور جو قصور ہم نے نہیں کیا اس کا بھی ہم سے انتقام لیا جارہا ہے عدالت میں سیاسی مخالفین جیسے سوال پوچھے گئے، ہمیں سزا دی نہیں بلکہ دلوائی جارہی ہے،عدالتوں کا دہرا معیار ہے جو جلد اپنے منطقی انجام کو پہنچے گا تاہم اس دہرے معیار کے خاتمے کے لیے جدوجہد جاری رکھیں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ میرے مقدمے میں کچھ اور جب کہ دوسروں کے مقدموں میں اور ضابطے ہیں تاہم یہ احتساب نہیں انتقام ہے اور اس کے باوجود بھی ہم عدالتوں کا احترام کرتے ہیں۔انہوں نے کہا ایک بار پھر واضح کر رہا ہوںجج سزا دے نہیں رہا سزا دلوائی جا رہی ہے ۔ دہرے معیار کے خاتمے کےلئے جدوجہد کرتے رہیں گے ۔ عدلیہ کا دہرا معیار جلد انجام کو پہنچے گاپہلے بھی مجھے پھنسایا گیا تھا آج بھی مجھے پھنسایا جا رہا ہے ۔ نواز شریف نے کہا ہے اس جدوجہد کو منطقی انتہا تک پہنچائیں گے ۔ میرے اور دوسرے مقدموں کے ضابطے الگ الگ ہیں۔ ایک میرا مقدمہ ہے ایک دوسروں کا مقدمہ ہے ۔۔ میرے داماد کو گرفتار کرکے پیش کیا گیا ۔میرے خلاف جب ہائی جیکنگ کا کیس بنا تو تب بھی ایسی ہی باتیں کی گئیں عدالتوں کا دوہرا معیار ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *