Untitled-1 copy

پنجاب میں ہیپا ٹائٹس فلٹر کلینکس کے قیام و فری علاج کااعلان

لاہورٟ: وزیراعلیٰ شہباز شریف نے پنجاب میں ہر ضلع میں ہیپا ٹائٹس فلٹر کلینکس کے قیام کا اعلان کر دیا یہ 36 فلٹر کلینکس رواں برس کے آخر تک کام شروع کردیں گے او ران فلٹر کلینکس میں ہرمریض کا علاج مفت ہوگا۔ انہوں نے یہ باتیںپاکستان کڈنی اینڈ لیورٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ وریسرچ سنٹر کے تحت بنائے جانے والے ہیپاٹائٹس فلٹر کلینک ٴمنصوبے کی زیر تعمیر عمارت کے دورے کے دوران میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہیں۔ انہوں نے ہیپا ٹائٹس فلٹر کلینک میں آنے والے تمام مریضوں کے 100فیصد مفت علاج معالجہ مہیا کرنے کا اعلان کرتے ہوئے کہاکہ پہلے غریب اور مستحق مریضوں کااس کلینک میں علاج مفت ہوتا تھا ٴلیکن میں اعلان کررہا ہوں کہ ہیپاٹائٹس فلٹر کلینک میں آنے والے 100فیصد مریضوں کا ہر لحاظ سے فری علاج ہوگا پنجاب حکومت اپنے وسائل سے سٹیٹ آف دی آرٹ کڈنی اینڈ لیور ٹرانسپلانٹ انسٹی ٹیوٹ و ریسرچ سنٹرکے منصوبے پر دن رات کام کر رہی ہے۔16ارب روپے کا یہ منصوبہ جگر اور گردے کے امراض میں مبتلا مریضوں کو سٹیٹ آ ف دی آر ٹ طبی سہولتیں فراہم کرے گا۔ ہسپتال کی تکمیل سے جگر کے امراض میں مبتلا مریضوں کو علاج کے لئے چین، یورپ یا بھارت نہیں جانا پڑے گابلکہ انہیں اس ہسپتال میں ہی علاج کی جدید اور معیاری سہولتیں حاصل ہوںگی اوران کا علاج اسی ہسپتال میں ہوگا۔ شہبا ز شریف نے کہا پاکستان اور پنجاب میں ہیپا ٹائٹس کامرض تیزی سے پھیل رہاہے اور اس کا سدباب ایک چیلنج بن چکا ہے۔ پنجاب حکومت کی یہ شاندارکاوش اس مرض کی روک تھام میںمعاون ثابت گی۔ہمارے پاس وسائل کی کوئی کمی نہیں، دکھی انسانیت کی خدمت اور مریضوں کے علاج معالجے کے لئے جتنے وسائل درکار ہوںگے، فراہم کئے جائیں گے، یہی وجہ ہے کہ فلٹر کلینک کو چلانے کے لئے شاندار مینجمنٹ سسٹم بنایا گیاہے۔ انہوں نے بتایا کہ پنجاب حکومت نے اربوں روپے کی سرمایہ کاری سے پینے کے صاف پانی کی فراہمی کا شاندار پروگرام بنایاہے جس کا آغاز جنوبی پنجاب کی 37تحصیلوں سے بیک وقت کیا جا رہاہے، اس ضمن میں جنوبی پنجاب میں سروے شروع کردئیے گئے ہیں یہ ایک جامع او رمربوط پروگرام ہے جس کے کنٹریکٹ رواں برس نومبر تک ایوارڈ کر دئیے جائیں گے اور کام شروع ہوجائے گااور 2018ئ میںہر ماہ پینے کے صاف پانی کے منصوبے مکمل ہوتے جائیں گے۔ بددیانت بیوروکریٹس نے اس پروگرام کو بہت نقصان پہنچایا اور اس میں اربوں روپے کے گھپلے کرنے کی کوشش کی لیکن پنجاب حکومت کی بروقت اقدامات سے ان کی یہ کوشش ناکام ہوئی،اب ان افسروں کے خلاف اینٹی کرپشن میں کارروائی ہو رہی ہے اور ایسے افسروں سے کسی قسم کی کوئی رعایت نہیں ہو گی۔انہوں نے گردوں کی غیر قانونی پیوند کاری گھناونا جرم قرار دیتے ہوئے کہا اس مقصد کے لئے پنجاب حکومت نے ڈاکٹر فیصل مسعود کی سربراہی میں پنجاب ہیومن آرگن ٹرانسپلانٹ اتھارٹی قائم کی ہے اور اس مکروہ کاروبار کا ہر قیمت پر خاتمہ کیا جائے گا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *