Adam

مشکل بات کو آسانی سے کہنے والے شاعر، عبدالحمید عدم

لاہور: نامور شاعر عبد الحمیدعدم 10 اپریل، 1910ئ کو گوجرانوالہ کے ایک گاؤں تلونڈی موسیٰ میں پیدا ہوئے۔ ابتدائی تعلیم گھر پر حاصل کی۔ اسلامیہ ہائی اسکول بھاٹی گیٹ لاہور سے میٹرک پاس کیا۔ پھر پرائیوٹ طور پر ایف اے کیا اور ملٹری اکاونٹس میں ملازم ہو گئے۔ 1939ئ میں 10 سال ملازمت کرنے کے بعد عراق چلے گئے۔ وہاں جا کر عراقی لڑکی سے شادی کر لی۔ 1941ئ میں ہندوستان آگئے۔ اور ایس اے ایس کا امتحان امتیازی پوزیشن میں پاس کیا۔ پھر ملٹری اکاونٹس میں ملازمت پر بحال ہوگئے۔ قیام پاکستان کے بعد آپ کا تبادلہ راولپنڈی کر دیا گیا آپ 1948ئ میں ملٹری اکاونٹس میں ڈپٹی اسسٹنٹ کنٹرولر مقرر ہوئے۔ اور اپریل، 1966ئ میں اس عہدے سے ریٹائر ہوئے۔ ریٹائرمنٹ کے بعد یعسوب کو اپنا اوڑھنا بچھونا بنا لیا۔ عدم نے اپنی شاعری کا آغاز ان دونوں کیا تھا جب اردو شاعری کے آسمان پر اختر شیرانی ، جوش ملیح آبادی اور حفیظ جالندھری جیسے روشن ستارے جگمگا رہے تھے۔ وہ شاعری کی ہر صنف پر عبور رکھتے تھے مگر غزل اور رباعی ان کی خاص پہچان تھی وہ مشکل سے مشکل بات کو نہایت آسانی سے کہنے میں مہارت رکھتے تھے۔انہیں ہردور کا شاعر کہا جاتا ہے ۔ ان کی شاعری کے لاتعداد مجموعے شائع ہوئے جن میں نقش دوام، زلف پریشاں، خرابات، قصر شیریں، رم آہو، نگار خانہ، صنم کدہ، قول و قرار، زیر لب، شہر خوباں، گلنار، جنس گراں، گردش جام، عکس جام، ساز و صدف، ادب رواں، شہر فرہاد، آب زر، سر و سمن اور بط مے کے نام سرفہرست ہیں۔ ان کے کلام کی کلیات بھی شائع ہوچکی ہے۔ عدم مزاح بھی خوب کرلیتے تھے ایک مرتبہ ِ عبدالحمید عدم اور پنڈت ہری چند اختر، سال ہا سال کے بعد ایک مشاعرے میں اکٹھے ہوئے تو پنڈت ہری چند اختر،عدم کو پہچان نہ سکے، کیونکہ وہ کبھی خاصے سِلم، سمارٹ رہے تھے اور اب بہت فربہ اندام ہو چکے تھے۔ عدم صاحب یہ جان کر کہ ہری چند اختر اْن کو پہچان نہیں سکے، اْن سے خود مخاطب ہوئےٜ
ٴٴپنڈت جیٝ مجھے پہچانا؟ مَیں عدم ہوںٝ ٴٴپنڈت ہری چند اختر کے مْنہ سے بے ساختہ یہ مصرعہ نکلاٜ
اگر تم عدم ہو تو موجود کیا ہے؟
ت ِ عدم کا ایک مشہور ضرب المثل شعر ہےٜ
یاد رکھو تو دل کے پاس ہیں، ہم
بھول جاو تو فاصلے ہیں بہت
10 مارچ 1981ئ کو عبدالحمید عدم طویل علالت کے بعد لاہور میں وفات پاگئے ا نہیںن لاہورکینٹ کے قبرستان میں سپرد خاک کیا گیا۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *